Web Special Novel, QAID JUNOON Novels 2022

QAID JUNOON | Novels 2022 | Ep_11 | Faiza Sheikh Novel

QAID JUNOON | Novels 2022 | Ep_11 | Faiza Sheikh Novel

 

Novelsnagri.com is a platform for social media writers. We have started a journey for all social media writers to publish their content. Welcome all Writers to our platform with your writing skills you can test your writing skills.

 

QAID JUNOON, Novels 2022, from romance to tragedy, from suspense to action, from funny to horror and many more free Urdu stories.

 

قید جنون

#از قلم فائزہ شیخ

#قسط_نمبر_گیارہ

_______________

بھائی۔۔۔۔۔۔ہم لوگ شاپنگ پر چلیں۔۔۔۔۔

زمیل کو نیچے آتے دیکھ۔۔۔ اس کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔۔

کیوں ۔۔۔۔ کیا لینا ہے۔۔۔۔ میری گڑیا نے۔۔۔۔۔

اس نے عقیدت سے اس کے ماتھے پر لب رکھتے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔

بھائی ۔۔۔۔۔ وہ میری فرینڈ ہے نا۔۔۔۔ آمنہ۔۔۔۔ اسکی نا آج برتھڈے ہے۔۔۔۔ تو اس نے انوائٹ کیا ہے ۔۔۔ اس کے لیے گفٹ لینا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔میں نے۔۔۔۔۔۔

اس نے زمیل کے ساتھ چلتے بتایا۔۔۔۔

نشاء۔۔۔ کب ہے برتھڈے۔۔۔۔

گاڑی کے پاس آتے پوچھا گیا۔۔۔۔۔۔

بھائی آج شام کو پارٹی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

او ۔۔۔ اچھا تو پھر۔۔۔۔ ایسا کرتے ہیں کہ۔۔۔۔۔۔میں جب آفس سے آؤں گا ۔۔۔۔۔ تو آپ تیار رہنا۔۔۔پہلے ہم مارکیٹ چلیں گے۔۔۔۔ پھر آپ کو آپکی فرینڈ کے گھر ڈراپ کر دوں گا ۔۔۔۔ٹھیک ہے نا ۔۔۔۔۔۔۔

اس نے مسکراتے ہوئے اسے اپنے پلان سے آگاہ کیا۔۔۔۔۔۔کہ ابھی اسکا آفس جانا بھی ضروری تھا۔۔۔۔۔اسکی ایک امپورٹنٹ میٹنگ تھیں۔۔۔۔۔۔نہیں تو وہ اسکو لازمی اپنے ساتھ لے جاتا۔۔۔۔۔

ٹھیک ہے بھائی۔۔۔۔۔ جلدی آئیے گا۔۔ لیٹ مت کروائیے گا مجھے ۔۔ ویٹ کروں گی میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔

انشراح نے وارن کرنے کے انداز میں کہا۔۔۔۔جس پر اس نے اثبات پر سر ہلاتے گاڑی میں بیٹھتے آفس کا رخ کیا۔۔۔۔۔۔۔

اف او میاؤں کو تو کھانا ہی نہیں دیا میں نے۔۔۔۔۔۔۔

میاؤں کے بارے میں یاد آتے ہی اس نے اندر کی طرف دوڑ لگائی کہ میاؤں نے ابھی بھوک سے شور مچا دینا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کیا تم لوگ۔۔۔۔ سب تیار ہو۔۔۔۔۔۔۔تاریخ کے ورقوں میں ایک نیا کارنامہ درج کروانے کے لیے۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ اس وقت ایک پرانے سی بلو جینز جس کا رنگ زیادہ استعمال کی وجہ سے اتر چکا تھا۔۔۔اس کے اوپر وائٹ شرٹ جس پر بہت سے داغ لگے ہوئے تھے۔۔۔۔۔جن کو دھونے سے بھی کوئی فرق نہیں پڑا تھا ۔۔۔۔۔ پاؤں میں ایک گھسی ہوئی چپل پہنے۔۔۔۔ گلے میں ایک چھوٹا سا سٹالر لیے۔۔۔۔۔۔بالوں کو تیل میں نچوڑ کر چوٹی بنائے۔۔۔۔۔ ہنی رنگ کی آنکھوں میں بھر بھر کر سرمہ جبکہ ۔۔۔۔۔۔ناک میں ایک تنکہ ڈالے۔۔۔۔۔ مکمل تیار کھڑی اپنے گینگ سے مخاطب ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔

جی باجی۔۔۔۔۔ اپن لوگ۔۔۔۔۔۔سب تیار ہیں ۔۔۔

سب نے یک زبان ہو کر کہا۔۔۔۔۔۔۔

باجی ۔۔۔۔ میں تو کہتا ہوں۔۔۔ اس بالی کو یہاں ہی چھوڑ جاتے ہیں۔۔۔۔۔اس کی امی ایوے ہی ہم سب کو ڈانٹے گی۔۔۔۔۔۔

حسن کو حسبِ عادت بلال عرف بالی کے ساتھ چلنے کی بات پسند نہ آئی۔۔۔۔ تبھی اپنی رائے کا اظہار کرتے کہا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اوئے۔۔۔۔ یہ جو تو زیادہ بک بک کرتا ہے۔۔۔۔ نا ۔۔۔۔ اگر اتنا کام کر کٹے نا۔۔۔۔ تو ہماری موجیں ہی ہو جائیں۔۔۔۔۔آیا بڑا مجھے ۔۔۔۔ چھوڑ کر جانے والی۔۔۔۔۔

اپنے بارے میں حسن کی بات سن کر اس نے اسکو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔

بالی۔۔۔۔یہ حسن ٹھیک کہہ رہا ہے۔۔۔۔ تو ہمارے ساتھ نہ چل۔۔۔۔ تیری اماں ابا غصے ہوں گےتجھ پر بھی۔۔۔۔ اور اپن لوگوں پے بھی۔۔۔۔۔

ماورا نے بھی حسن کی بات سے اتفاق کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس سے سب بھی متفق تھے۔۔۔۔۔

باجی۔۔۔۔ لیکن میں بھی تو گینگ کا حصہ ہوں نا۔۔۔۔۔ پھر ایسا کیوں۔۔۔۔کہہ رہی ہے توں۔۔۔۔

بالی نے افسردہ ہوتے کہا ۔۔۔۔

تیرے کہنے کا مطلب کیا ہے۔۔۔۔ ہم نے تیری منتیں کی تھی کیا۔۔۔۔۔ تجھے ہی شوق تھا۔۔۔ اپن لوگوں کے ساتھ کام کرنے کا۔۔۔۔۔۔۔

اب کہ اویس نے کہا جس پر بالی نے دھندلی نظروں سے ماورا کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چپ کرو تم سب۔۔۔۔اب کسی نے کچھ بولا تھا۔۔۔ تو میں نے اسکو گنجا کر کے اس کے سر پر ڈھول بجا دینے ہیں۔۔۔۔۔

ماورا نے سب کی زبانوں پر لگام ڈالا جو کب سے بالی کو سنائی جا رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دیکھ بالی۔۔۔۔۔ ہم سب کو تم بہت پیارا لگتا ہے۔۔۔۔ یہ سب تیری بھلائی کے لیے کہہ رہے ہیں ۔۔۔اپن لوگوں کے سر پر تو نہ ہی ماں ہے نہ ہی باپ جو اپن لوگوں کو سمجھا سکے ۔۔لیکن تیرے پاس تو دونوں ہیں۔۔۔۔۔ تو غریب ہو کر ہم سب اپن لوگوں سے امیر ہے ۔۔۔۔ہم سب تو مجبوری کی خاطر کرتے ہیں یہ سب۔۔۔۔شوق سے کوئی نہیں کرتا۔۔۔۔ لیکن تجھے کون سی مجبوری تیرا باپ تو محنت مزدوری کر کے تجھے کھلاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ اگر تو نے یہ سب کرنا ہی ہے ۔۔تو کیا فایدہ تیرے باپ کے کمانے کا۔۔۔۔۔۔۔تیرے ماں باپ کو کتنا دکھ ہو گا نا کہ تو اپن لوگوں کے ساتھ چوری کرنے جائے گا۔۔۔۔۔۔ اب تو مارے سے وعدہ کر کے آج سے توں یہ سب نہیں کرے گا ۔۔۔۔۔۔ تو اپن لوگوں کا دوست ہمیشہ رہے گا۔۔۔۔ لیکن گینگ کا حصہ نہیں۔۔۔۔وعدہ کر مارے سے۔۔۔۔۔۔ہاتھ رکھ مارے ہاتھ پر ۔۔۔۔۔۔۔۔

اس وقت وہ بلال کو سمجاتے۔۔۔ایک گوار، لڑاکا ، گاؤں کی لڑکی نہیں لگ رہی تھی جو ہر وقت ٹارزن بنے لوگوں کو دھمکاتی رہتی تھی۔۔۔۔۔جبکہ وہ اس وقت ایک عام سی لڑکی لگ رہی تھی۔۔۔۔ جو ہر لڑکی کی طرح اپنے اندر ایک حساس ، خوبصورت دل رکھتی ہے۔۔۔ وہ دل جو کسی کو بھی تسخیر کر سکتا ہے ۔۔۔۔۔۔

اوئے اب آنے پھاڑ پھاڑ کر کیا دیکھے وے۔۔۔۔ ہاتھ رکھ باجی کے ہاتھ پر ۔۔۔۔

طلحہ کے کہنے پر اس نے نم نگاہوں سے سب کو دیکھتے ماورا کے ہاتھ پر ہاتھ رکھتے وعدہ کیا ۔۔۔۔۔جس کو دیکھ کر سب کے ہونٹوں پر مسکراہٹ بکھر گئی۔۔۔۔۔۔۔

آج وہ کسی کو سیدھے رستے پر لانے کا وسیلہ بنی تھی۔۔۔۔ اب ناجانے کون تھا جس نے اسکو درست سمت کا تعین کروانا تھا۔۔۔۔ اسی وقت ٹھنڈی ہواؤں نے ایک دوسرے سے سرگوشی کے انداز میں ہم کلامی کی ۔۔۔۔۔۔

شاید کوئی ملنے والا ہے ۔۔۔۔

شاید ماورا کا شہزادہ۔۔۔۔

شہزادہ۔۔۔۔

شہزادہ ۔۔۔

ٹوں۔۔ٹوں۔۔۔۔ٹوں۔۔۔۔۔

موبائل کی بیل کی آواز پر اس نے سکرین کی طرف دیکھا جہاں پر “بگ برو” لکھا نظر آرہا تھا۔۔۔۔۔

ہیلو۔۔۔برو۔۔۔۔۔کیسے ہیں یاد آگیا ہے۔۔۔کہ آپ کا ایک چھوٹا سا بھائی بھی ہے جو چاند کا ٹکڑا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔

موبائل کان سے لگاتے اس نے عادت کے مطابق اپنی راگ الاپنہ شروع کی۔۔۔جس پر مقابل کے ہونٹوں پر مسکراہٹ بکھری۔۔۔۔۔۔۔

آبان ۔۔۔۔۔ عورتوں سے ضد لگا کر بولتے ہو کیا۔۔۔۔

دوسری طرف سے آنے والی آواز پر اس نے صدمے سے موبائل کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔

بھائی۔۔۔۔ ناٹ فئیر ۔۔۔۔باہر رہ کر آپکو لڑکیوں اور اپنے بھائی میں کوئی فرق نہیں نظر آتا۔۔۔کیا؟

اس نے تند نظروں سے موبائل کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔

ہاہاہاہاہاہا۔۔۔۔۔ میرے راج دلارے۔۔۔ ائیر پورٹ پہنچو۔۔۔۔۔

دوسری جانب سے حکم دیا گیا۔۔۔جس پر اس نے منہ بسورا۔۔۔۔۔

آپ ائیر پورٹ کا تو ایسے کہہ رہے ہو۔۔۔جیسے آپ آرہے ہو۔۔۔۔۔

شکوہ کرنے والے انداز میں کہا گیا لیکن اگلی جانب سے آنے والی آواز نے اسکو اچھلنے ہر مجبور کر دیا ۔۔۔۔۔

سیریسلی آپ آرہے ہیں ۔۔۔۔۔ بھائی۔۔۔۔ یاہو ۔۔۔میں ابھی پہنچتا ہوں ائیر پورٹ۔۔۔۔۔۔

موبائل بند کرتے اسکو بیڈ پر اچھالتے خود تیزی سے چینجنگ روم کا رخ کیا ۔۔کہ اسکو تیار ہو کر ریحان کو لینے بھی جانا تھا۔۔۔جو آج ناجانے کتنے سالوں بعد اس گھر کی دہلیز پر قدم رکھنے والا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔

_____

مبارک ہو مسٹر زمیل، یہ پرجیکٹ آپکی کمپنی۔۔۔۔”مرتضی کمپنی” کو دیا جاتا ہے۔۔۔۔۔

یہ الفاظ سنتے ہی اس کے چہرے پر ایک فتح یابی مسکراہٹ نمودار ہوئی ۔۔۔۔۔۔

شکریہ۔۔۔مسٹر حلال۔۔

اس نے ان سے ہاتھ ملاتے ہوئے کہا۔۔۔ جس پر وہ اسکو الوداعی الفاظ ادا کرتے رخصت ہوگئے۔۔۔۔

وہ آج بہت خوش تھا اس پروجیکٹ کے لیے وہ پچھلے دو سال سے محنت کر رہا تھا۔۔۔اور آج وہ اپنی محنت کا پھل وصول کر چکا تھا ۔۔ یہ پروجیکٹ ایک جگہ کا تھا۔۔۔جہاں پر وہ ایک یتیم خانہ تعمیر کرونا چاہتا تھا۔۔۔۔۔۔لیکن اس کے مخالف جونسی ٹیم تھی وہ وہاں پر ایک کلب بنوانا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔ اس پروجیکٹ کو حاصل کرنے کے لیے اس نے کتنی محنت کی تھی۔۔۔ اور آج وہ اسکے پاس تھی ۔۔۔۔۔ اس کے ارادے نیک تھے ۔۔ اور اس میں کوئی شک نہیں کہ خدا نیتوں کو دیکھتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سر۔۔۔ آپکی سسٹر کا فون آرہا ہے۔۔۔۔۔

وہ ابھی یہ سب سوچ ہی رہا تھا کہ اس کی سیکرٹری اسکا فون لیتی اندر داخل ہوئی کہ وہ میٹنگ کے دوران فون کا استعمال کرنے کا متحمل بالکل نہ تھا۔۔۔۔۔

ٹھیک ہے تم جاؤ۔۔۔۔

اس نے فون اس سے لیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔اور اپنی گاڑی کی کیز اٹھاتے باہر کا رخ کیا کہ اب اسکا ارادہ گھر جا کے انشراح کے ساتھ۔۔شاپنگ پر جانے کے تھا۔۔۔۔ جانتا تھا کہ اس کی بہن بالکل اپنی میاؤں کی طرح منہ پھلائے بیٹھی ہو گی۔۔۔۔۔۔تصور میں اسکا چہرہ دیکھتے اس کے ہونٹوں پر مسکراہٹ نمودار ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

______

کہیں بھائی۔۔۔۔ نے میرے ساتھ کوئی مذاق تو نہیں کر دیا ۔۔۔۔۔

اس نے سرگوشی کے انداز میں ہم کلامی کی۔۔کہ پچھلے آدھے گھنٹے سے وہ ائیر پورٹ پر اس کا محو انتظار تھا۔۔۔۔۔لیکن وہ اسکو دکھائی ہی نہیں دے رہا تھا۔۔۔۔۔۔

اب تو وہ ہر کسی کا منہ دیکھ کر تھک بھی چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔

ایکس کیوز می مس۔۔۔۔ آپ نے میرا بھائی تو نہیں دیکھا۔۔۔۔۔

اس نے پاس سے گزرتی ایک لڑکی سے پوچھا جو انڈین طرز کے ڈریس میں ملبوس شاید کسی کا انتظار کر رہی تھی۔۔۔۔

اووووو۔۔۔۔ مسٹر۔۔۔۔ کیا میں نے تمہارے بھائی کو گود لیا ہے جو مجھے پتا ہو گا۔۔۔۔کہ تمہارا بھائی کیسا دکھتا ہو گا۔۔۔۔۔۔

اس نے اس خوبرو مرد کو دیکھا جو اس سے عجیب طرز کا سوال پوچھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔

آپ کو شرم نے آتی۔۔۔ میرے اتنے بڑے بھائی کو اپنی اس چھوٹی سی گود میں لینے کی بات بھی کرنے کی۔۔۔۔۔۔توبہ توبہ آج کل کی لڑکیاں۔۔۔۔۔۔۔۔

اس نے سنجیدہ سے لہجے میں کہا جبکہ آنکھوں میں چمک واضح تھی۔۔۔جسکا مطلب واضح تھا کہ اب سامنے کھڑی لڑکی کی شیر نہیں۔۔۔۔۔۔۔جبکہ اس کی بات سن کر مقابل لڑکی کے چہرے کا رنگ سرعت سے بدلہ۔۔۔

آپ کو شرم نہیں آتی۔۔۔ ایک لڑکی سے ایسے بات کرتے ہوئے ۔۔۔

اس نے اسکو ناگواری سے دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔ اس کی بات پر اس نے اس لڑکی کو۔ ایسے دیکھا۔۔۔۔۔کہ وہ لڑکی اس کو گالیوں سے نوازتے وہیں سے دم دبا کر بھاگ گئی۔۔۔جبکہ کہ اس کو ایسے بھاگتے دیکھ اس کا قہقہہ گونجا۔۔۔۔کہ وہ اپنا خراب موڈ جو بھائی کے نہ ملنے سے خراب ہو چکا تھا۔۔۔۔اب درست کر چکا تھا۔۔۔۔۔۔ ریحان کا خیال آتے ہی اس نے اسکو دیکھنے کے لیے اردگرد نظریں گھمائی لیکن اچانک کسی کی کان پکڑنے پر اپنے پیچھے دیکھا۔۔۔۔۔جہاں بلیک ٹوپیس میں مردانہ وجاہت کا شاہکار اسکا بڑا بھائی “ریحان شہباز” اس کے پیچھے اس کا کان پکڑ کر کھڑا تھا ۔۔۔۔۔۔۔

برو۔۔۔۔۔

اس نے اس کے گلے لگتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔

برو کے بچے۔۔۔۔۔ شرم نہیں آتی۔۔۔ ایک لڑکی کو تنگ کرتے ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔

اس نے اس کے گرد بنائے ہوئے بازوؤں کے حصار میں سختی لاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔

اوچ ۔۔۔ برو۔۔۔۔ چھوڑیں تو۔۔۔۔۔

اس نے خود کو چھڑواتے ہوئے کہا ۔۔جس پر اس نے ایک بار پھر اسکو زور سے خود میں بھینچا۔۔۔۔۔۔۔۔کہ اتنے سالوں بعد مل رہے تھے ۔۔۔

برو میں نے آپ کو بہت مس کیا۔۔۔۔۔

اس نے آنکھوں میں آئی نمی صاف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔

میں نے۔۔۔۔ ویسے یہ جس طرح تم لڑکی کو تنگ کر رہے تھے۔۔۔۔ اگر میری جگہ تمہاری بیوی دیکھ لیتی تو۔۔۔۔۔۔

اس نے ابرو اچکاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔جس پر اسکی آنکھوں میں ایک نازک کا سراپہ لہرایا۔۔اور آنکھوں کی چمک اور ہونٹوں کی مسکراہٹ میں مزید اضافہ ہوا۔۔۔۔۔۔

تجھے سوچ کر جو آتی ہے۔۔۔۔۔۔۔

وہ مسکراہٹ کمال کی ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بھائی۔۔۔۔۔ وہ تو میں بور ہو رہا تھا تو سوچا کہ تھوڑا سا ہلہ گلہ کر لوں آپ کے آنے تک۔۔۔۔اور ویسے بھی۔۔۔۔۔۔۔ میری بیوی بہت معصوم ہے۔۔۔۔ اور وہ جانتی ہے کہ اس کا بان اس کے علاوہ کسی کو دیکھ بھی نہیں سکتا ۔۔۔۔۔۔

اس نے فخر سے کہا۔۔۔۔جو کہ اس کو اپنی نشاء اور محبت پر تھا۔۔۔۔۔۔۔جبکہ ریحان شہباز نے اپنے بھائی کے خوشیوں پر دل سے آمین کہا۔۔۔۔۔۔۔

اب چلیں کہ یہاں ہی اپنے عشق کے قصے سناؤ گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس نے اسکو ٹہوکا مارتے ہوئے کہا۔۔۔۔ جس پر اس نے مسکراتے ہوئے سر جھٹکتے اس پر پری وش کے خیالوں سے خود کو آزاد کیا اور دونوں بھائیوں نے گھر کے لیے رخ کیا۔۔۔ جہاں پر رضیہ بیگم اور شہباز صاحب ریحان کی آمد سے بے خبر اپنے کاموں میں مصروف تھے۔۔۔۔۔۔

جاری ہے۔۔۔۔۔۔

 

Urdu http://Novelsnagri.com is a website where you can find all genres, Rude heroine romantic novel, QAID JUNOON, Novels 2022, from romance to tragedy, from suspense to action, from funny to horror and many more free Urdu stories.

Also Give your comments on the novels and also visit our Facebook page for E-books . Hope all of you enjoy it. And also visit our channel for more novels

https://youtube.com/channel/UCKFUa8ZxydlO_-fwhd_UIoA

 

1 thought on “QAID JUNOON | Novels 2022 | Ep_11 | Faiza Sheikh Novel”

Leave a Comment

Your email address will not be published.