Web Special Novel, Rude Heroine based Novel,

Rude Heroine based Novel | QAID JUNOON Ep#8

Rude Heroine based Novel, QAID JUNOON Ep#8, Faiza Sheikh Novels

 

Rude Heroine based Novel, Urdu novel Qaid Junoon by Faiza Sheikh… Novelsnagri.com is a platform for social media writers. We have started a journey for all social media writers to publish their content. Welcome all Writers to our platform with your writing skills you can test your writing skills.

 

قید جنون

قسط نمبر آٹھ

از قلم فائزہ شیخ

°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°

باجی۔۔۔۔۔باجی۔۔۔۔۔۔

اس وقت سب بچے ماورا کے ساتھ میدان میں موجود تھے۔۔۔۔۔ہر اتوار کی طرح آج بھی فٹ بال کا میچ تھا۔۔۔۔۔۔ایک طرف ماورا کی ٹیم تھی اس میں اسکی پوری گینگ شامل تھی۔

جبکہ دوسری طرف اس بستی کا ایک لڑکا شیدا جو عمر میں تقریباً ماورا سے دو سال ہی چھوٹا ہو گا۔ اپنی پوری ٹیم کے ساتھ موجود تھا ۔۔۔۔۔۔دونوں ٹیم کے سکور برابر تھے ۔ آخری باری تھی دونوں میں ایک ٹیم نے ہارنا تھا اور ایک کا مقدرجیتنا تھا ۔۔۔۔۔۔

ماورا کی پوری گینگ نے اس وقت ماورا نام کی دھوم مچائی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔ جبکہ وہ ہاتھ میں بیٹ پکڑے سامنے بالنگ کرانے کے لیے تیار شیدا کو مات دینے کے لیے مکمل تیار تھی۔۔۔۔۔۔۔

اوئےےےے شیدا ۔۔۔۔ یار من جا گل ہماری ۔۔۔۔۔ہر بار کی طرح باجی ۔۔۔۔۔ تجھے دھول چٹا دے دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔

داؤد نے مسکراتے ہوئے اس کی ہر بار ہارنے پر چوٹ کرتے کہا ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔

اؤچپ کر ،،،،،،، باجی کا دم چھلا۔۔۔۔۔۔۔ دیکھی تیری باجی کیا مجھے دھول چٹائی گی ۔۔۔۔۔ میں تیری باجی کو ہرا کے ہی دم لوں گی۔۔۔۔آج تو ۔۔۔۔۔

شیدا نے ایک نظر ماورا کو دیکھتے داؤد کو گھورتے اپنے آپ پر فخر کرتے کہا ۔۔۔۔۔جیسے وہ ماورا کو ہرا کر ہی دم لے گا۔۔۔۔۔

شیدا ،،،،، گینڈا جو بھی تیرا نام ہے ۔۔۔۔۔ کیا میرے ساتھیوں کو دھمکی دیتا ہے۔۔۔۔ اگر مائی کا لال ہے نا تو مجھے ہرا کر دکھا ۔۔۔۔۔

اس نے بیٹ کو ہاتھ میں پکڑتے اس کے پاس جاتے ہوئے کہا جس پر اس کے دو قدم پیچھے ہٹنے پر سب کا قہقہہ نکل گیا۔۔۔۔۔۔

یہ باجی۔۔۔۔۔ تم ہم کو ڈرا نہیں سکتا۔۔۔۔۔ تم واپس جاؤاپنی جگہ پر۔۔۔۔۔۔

اس کے اپنے پاس سے نہ ہلنے پر اس نے کہا جس پر اسنے اسکو حطرناک گھوری سے نوازتے اپنی پوزیشن سنبھالی۔۔۔۔۔۔۔

باجی۔۔۔۔۔ باجی۔۔۔۔۔۔۔ ماورا باجی۔۔۔۔۔۔۔۔

اس سے پہلے کہ ماورا اپنی طرف آتے ہوئے بال کو کک کرتی سامنے سے روتے ہوئے حسن کو اپنی طرف آتے دیکھ بیٹ کو وہی پھینکتے اس کی طرف دوڑی جس کا چہرہ رونے سے سرخ پڑ چکا تھا ۔۔۔۔

کیا ہوا ۔۔۔۔ یہ کیوں رو رہا ہے تو ۔۔۔۔

اس نے پریشانی سے پوچھا ۔۔۔۔۔ جبکہ باقی سب بچے بھی پریشان سے کھڑے اس کے جواب کے منتظر تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ باجی ۔۔۔۔۔وہ وہ ۔۔۔۔ باجی

ابے وہ وہ کیا کر رہا ہے ۔۔۔۔۔بول بھی ۔۔۔۔۔

اس نے مسلسل اسکی وہ وہ لفظ کی گردان سے تنگ آکر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

باجی بےبے کو پتا نہیں کیا ہوگیا ہے وہ سانس نہیں لے پا رہی۔۔۔۔۔۔۔ اےےے

حسن کی بات مکمل کرنے کی دیر تھی وہ بھاگتے ہوئے بےبے کی طرف گئی۔۔۔۔۔۔۔

بےبے کیا ہوا ۔۔۔۔۔تجھے ۔۔۔۔۔ تو نے میرے کو بتایا کیوں نہیں۔۔۔۔۔۔۔

لکڑی کا دروازہ جس پر مٹی کا لیپ کیا گیا تھا اس کو دھکیتے اندر داخل ہوتے بےبے کے پاس بیٹھتے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔

ارشاد بیگم جن کو سب بےبے کہتے تھے ۔۔۔ انکی نام کو بستی میں کم ہی لوگ جانتے تھے ۔۔۔۔

وہ ایک بزرگ خاتون تھی۔۔۔۔۔ انکا شوہر وفات پا چکا تھا۔۔۔ اور خدا نے انکو اولاد کی نعمت سے محروم رکھا تھا۔۔۔۔۔۔ بستی کے زیادہ تو بچے جو یتیم تھے ۔۔۔۔ وہ ان کو اپنے پاس رکھتی تھی۔۔۔۔۔ان بچوں میں ماورا اور اسکی گینگ بھی شامل تھی ۔۔۔۔۔۔

ارے میری رانی۔۔۔۔۔کچھ نہیں ہوا۔۔۔۔یہ تو اب جسم بڈھا ہو گیا اے میرا۔۔۔۔۔۔ تسی سب پریشان نہ ہوں۔۔۔۔۔

بےبے نے اپنے کانپتے ہاتھوں سے ماورا کے آنسوں صاف کرتے سب بچوں کو کہا جو بےبے کی طبیعت کا سنتے یہاں آگئے تھے اور آنکھوں میں آنسو لیے کھڑے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔

بےبے ایسا تو نہ بول توں اب ۔۔ ۔۔ تیرے سوا اپن لوگوں کا ہے ہی کون اب اس دنیا میں۔۔۔۔۔

اویس نے روتے ہوئے کہا جس پر سب سے اتفاق کرتے سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔

بے بے وہ تیرا کہاں ہے جو ۔۔۔۔ میں۔ نے تیرے کو لا کے دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔ سانس لینے کے لیے۔۔۔۔۔

ماورا نے چارپائی پر آگے پیچھے دیکھتے کہا۔۔۔

باجی ۔۔۔۔ وہ تو ختم ہو گیا۔۔۔۔۔۔۔۔

حسن نے اسکو جواب دیا۔۔۔۔

تو مجھے کیوں نہیں بتایا ۔۔۔۔۔۔۔ بےبے میں لے کے آتی ہوں ۔۔۔

بےبے کو جواب دیتی باہر کا رخ کیا۔۔۔۔ بےبے جانتی تھی کہ وہ چوری کرنے ہی جارہی ہے۔۔۔۔ لیکن وہ چاہتے ہوئے بھی کبھی اس کو منع نہ کر پائی کہ انکا کون سا کوئی والی وارث تھا ۔۔۔۔ جو ان کی ضروریات کا خیال رکھتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جبکہ باقی سب بچے بےبے کے پاس بیٹھے اس کا دھیان بھٹکانے میں مصروف ہو چکے تھے ۔۔۔۔۔۔ ان کو یقین تھا کہ ان کی باجی کچھ نہ کچھ انتظام کر کے آئے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ ریسٹورنٹ میں داخل ہوئے تو ان کی نظر لاسٹ والے ٹیبل پر بیٹھے آبان شہباز پر پڑی۔۔جو نیوی بلو جینز کے اوپر بلیک شرٹ پہنے ۔۔ اس کے بازو کہنیوں تک فولڈ کیے , خوبصورت مسکراہٹ کے ساتھ اپنے سامنے کھڑے ویٹر سے گفتگو میں مصروف تھا۔۔۔۔۔۔۔

ان پر نظر پڑتے ہی ان کی طرف آیا۔۔۔۔۔۔۔

کتنی دیر سے انتظار کر رہا ہوں ۔۔۔ تیرا ۔۔۔۔۔۔شکر ہے آگیا ہے تو ۔۔۔۔۔نہیں تو میں سمجھا تھا کہ تو وہی اپنے بیڈ پر جام تو نہیں ہو گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آبان نے زمیل کے گلے لگتے عادتاً فضول گوئی کی ۔۔۔۔۔ جس پر زمیل نے اس کو خود سے الگ کرتے گھورا۔۔۔۔۔۔

اوووو میری بیوی کو بھی لایا ہے تو ۔۔۔۔

اس نے ایک نظر اپنی ناراض ناراض بیوی کو دیکھتے ہوئے کہا جو اس کو مکمل اگنور کرنے کی کوشش کر رہی تھی ۔۔۔۔۔ یہ الگ بات تھی کہ یہ ایک مخص کوشش تھی ۔۔۔۔۔۔

آبان اور زمیل بچپن کے دوست تھے۔۔۔ آبان بچپن سے انشراح کو پسند کرتا تھا ۔۔۔۔ کب یہ لڑکی اس کی زندگی بن گئی وہ خود بھی انجان تھا ۔۔۔۔۔ اپنی چاہت کو خود پر حلال کرتے پچھلے سال دونوں خاندانوں کی رضا مندی پر وہ رشتہ ازدواج میں بندھ چکے تھے۔۔۔۔۔

لیکن ان کی رخصتی انشراح کی تعلیم مکمل کرنے کے بعد رکھی گئی تھی۔۔۔۔۔

منہ دھو کی رکھ۔۔۔۔۔ جو میرے ساتھ آئی ہے نا وہ تیری بیوی نہیں۔۔۔۔ میری بہن ہے۔۔۔۔۔ تیری بیوی تیرے سے ناراض ہے ۔۔۔۔۔ ہیں نہ میری جان۔۔۔۔۔۔۔

زمیل کو حقیقت بتانے کے لیے انشراح سے پوچھا ۔۔۔جس ہر اس نے اثبات میں سر ہلاتے زمیل کے گرد بازوؤں کا حصار باندھا۔۔۔۔۔جیسے عملاً بھائی کی بہن ہونے کی تصدیق کی گئی ہو۔۔۔۔۔۔۔جب کی ان دونوں بہن بھائیوں کے پیار کے اس کھلے مظاہرے پر اس کو ایسا لگا تھا ۔۔۔۔

جیسے وہ جل جل کر کوئلہ ہو جائے گا۔۔۔۔۔ ویٹر۔۔۔۔ویٹر۔۔۔۔۔۔۔

اونچی اونچی آواز میں ویٹر کو بلاتے دونوں بہن بھائیوں کو ٹھٹکنے پر مجبور کیا۔۔۔۔ کہ ابھی تک تو ٹھیک تھا ۔۔ ب ناجانے اس کو کیا ہو گیا۔۔۔۔۔۔۔۔

جی جی سررررررر۔۔۔۔۔

ویٹر بھی ہانپتا ہوا دوڑا ہوا آیا۔۔۔۔۔۔

فیملی کیبن اس وقت کوئی فری ہے ۔۔

جی سر۔۔۔۔۔۔۔ فری ہے ۔۔۔۔۔۔

ویٹر کے طرف سے مثبت جواب موصول ہوتے ہی بنا کسی کو سمجھنے کا موقع دیے۔۔۔ انشراح کو کھینچ کر ساتھ کے گیا۔۔۔۔۔۔ جبکہ زمیل نے ایک نظر اسکی پشت کو گھورتے ایک پر سکون سانس فضا میں خارج کی۔۔۔۔ جانتا تھا کہ اب اپنی بیوی کو منا کر ہی لائے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تم یہاں کھڑے کیا کر رہے ہو ۔۔۔۔۔ جاؤ۔۔۔۔

ویٹر پر نظر نظر پڑتے ہی کہا۔۔۔۔۔ جو ہونکوں کی طرخ اس رستے کو دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔جہاں سے آبان انشراح کو لے گیا ۔۔۔۔۔ جبکہ وہ چیئر پر بیٹھتے موبائل نکالتے اس میں مگن ہو گیا۔۔۔۔یہ بھی ان کے آنے تک خود کو مصروف رکھنے کی کوشش تھی۔۔۔۔۔۔

ابے ۔۔۔۔۔ یہاں کس کو لوٹوں۔۔۔۔آج تو یہاں کوئی۔۔۔۔پیسوں والا نظر ہی نہیں آرہا ۔۔۔۔۔۔۔

اس وقت شہر کی مارکیٹ میں موجود لوگوں کا جائزہ لینے میں مصروف تھی ۔۔۔۔۔

کیوں نہ آج اس ۔۔۔۔۔ شہری چھوکری کو بلی کی بکری بنایا جائے۔۔۔۔۔چل ماورا شہزادی۔۔۔تیار ہو جا۔۔۔۔۔ آگیا تیرا شکار۔۔۔۔۔۔۔

اس نے سامنے سے آتی لڑکی کو دیکھتے ہوئے خود کلامی کے انداز میں کہا۔۔۔۔ جو پنک ٹاپ اور فیروزی ٹراؤزر میں ملبوس۔۔۔ ایک امیر گھرانے کی معلوم ہوتی تھی۔۔۔۔۔۔

اس کے اپنے نزدیک پہنچنے ہی وہ آہستہ آہستہ قدم اٹھاتے اس سے ٹکرائی۔۔۔۔سامنے موجود لڑکی وہ شاید اپنے ہی دھیان میں موبائل میں مصروف تھی۔۔۔۔۔۔۔

کسی چیز سے ٹکرانے پر پاؤں میں پہنی ہیل کے مرنے پر خود کو سنبھال نہ پائی اور اگلے ہی پل اس نے فرش کو سلامی دی۔۔۔۔۔۔ جس سے اس کا موبائل اور بیگ بھی اس سے کچھ قدم دور ماورا کے پاؤں میں گرے ۔۔۔

سوری باجی۔۔۔۔ مارے کو معاف کرو ۔۔۔۔۔ غلطی سے ہو گیا۔۔۔۔۔اس نے اس کا بیگ اٹھاتے نامحسوس انداز میں بیگ میں پڑا ہوا چھوٹا سا والٹ اپنی قمیض کی سائیڈ پاکٹ میں ڈالا ۔۔۔۔۔۔۔

اب کھڑی کیا دیکھ رہی۔۔۔۔ آندھی عورت اٹھاؤ۔۔۔۔ مجھے ۔۔۔۔

اس کو مسلسل کھڑا دیکھ کر کہا جس پر وہ اثبات میں سر ہلاتے اس کی مدد کرنے کو تیار ہوئی۔۔۔۔۔

یہ ساتھ ریسٹورنٹ ہے ۔۔۔۔وہاں چھور دو مجھے۔۔۔۔۔۔ ۔

اس لڑکی نے ساتھ بنے ریسٹورنٹ کی طرف اشارہ کیا۔۔۔۔

باجی۔۔۔۔ تم نہ مجھے دل سے معاف کر دینا۔۔۔۔۔ مجھے گالیاں نہ دینا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے اسکو ریسٹورنٹ میں لے جاتے چئیر پر بٹھاتے کہا ۔ ۔۔

اچھا ۔۔۔ اچھا سہی جاؤ اب تم۔۔۔۔ اور یہ آنکھوں کا استعمال کیا کرو۔۔۔۔۔اس نے اس کو جانے کا کہتے خود ویٹر کو آواز دی۔۔۔۔

جبکہ ریسٹورنٹ سے باہر نکلتے ۔۔۔۔ اس کا ارادہ بےبے کے لیے ادویات اور ضروری سامان لینے کا تھا۔۔۔۔۔۔

اچھا خاصہ پیسہ ہے اس میں تو ۔۔۔۔ایسا کرتی ہوں۔۔۔۔ آج بےبے کے لیے کچھ پھل بھی لے لیتی ہوں۔۔۔۔۔ بےبے خوش ہو جائے گی

اس نے شرٹ کی سائڈ پاکٹ سے والٹ نکالتے سامنے فروٹ کی شاپ کا رخ کیا ۔۔۔۔۔

جاری ہے۔۔

رائے کا اظہار لازمی کیا کریں۔۔۔۔۔۔

اس سے رائیٹر کو موٹیویشن ملتی ہے ۔۔۔۔۔۔

شکریہ۔۔۔۔

 

 

Urdu Novelsnagri is a website where you can find all genres, Rude Heroine based Novel, from romance to tragedy, from suspense to action, from funny to horror and many more free Urdu stories.

Also Give your comments on the novels and also visit our Facebook page for E-books . Hope all of you enjoy it. For more novel visit to channel tooohttps://youtube.com/channel/UCKFUa8ZxydlO_-fwhd_UIoA

 

Leave a Comment

Your email address will not be published.