Rude Heroine, Novels 2022,

Rude Heroine | Novels 2022 | QAID JUNOON | Ep_09

Rude Heroine, Novels 2022, QAID JUNOON by Faiza Sheikh

Rude Heroine, Novels 2022, Urdu novel, Qaid Junoon by Faiza Sheikh… Novelsnagri.com is a platform for social media writers. We have started a journey for all social media writers to publish their content. Welcome all Writers to our platform with your writing skills you can test your writing skills.

قید جنون

قسط نمبر نو

از قلم فائزہ شیخ

••••••••••••••••••••••••••••••••••••••••••••

کیا میری معصوم سی ننھی سی جان مجھ سے ناراض ہے۔۔۔۔۔

اس نے اسکو کیبن میں لے جاتے دیوار سے پن کرتے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔

بولو نا میری چشمش۔۔۔۔۔

اب کہ اس نے اس کے گال پر لبوں کا لمس چھوڑتے چھیڑا کہ وہ کتنا چڑتی ہے لفظ چشمش سے۔۔۔۔۔۔۔

اچھا نا سوری میری جان۔۔۔۔۔معاف کر دو اپنے پیارے سے معصوم سے شوہر کو۔۔۔۔۔

اس کی مسلسل خاموشی پر اسکو سینے سے لگاتے کہا۔۔۔۔ جس پر وہ اس کے بازوؤں کے حصار سے نکلتی وہاں پر رکھی گئی ڈائیٹنگ کی ایک چئیر پر بیٹھی۔۔۔ چہرہ ہنوز پھولا ہوا تھا ۔۔۔۔ جبکہ مقابل کی جسارتوں پر چہرے پر سرخی دیکھی جا سکتی تھی۔۔۔۔۔۔۔

مطلب زیادہ ناراض ہے۔۔۔۔ میری بیوی مجھ سے۔۔۔۔۔۔۔ تو کیا کیا جائے۔۔۔۔۔ ناراضگی دور کرنے کے لیے۔۔۔۔۔

اس کے پاس جاتے اسکو چئیر سے اٹھاتے خود اسکی جگہ پر بیٹھتے اسکو اپنی گود میں بٹھاتے کہا۔۔۔۔۔جس پر وہ اسکی قربت میں کانپی۔۔۔۔۔ پلکوں نے حیا سے سرخ عارضوں کا رخ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نشا۔۔۔ بان کی جان۔۔۔۔ کچھ تو بولو۔۔۔۔۔

اسکی مسلسل خاموشی پر اس کے ماتھے پر لبوں کا لمس چھوڑتے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔

بان۔۔۔۔۔

جی بان کی معصوم سی جان۔۔۔۔۔

وہ تو اس کے بولنے پر ہی فدا ہوا۔۔۔۔۔

میں آپ سے ناراض ہوں۔۔۔۔آپ نے مجھے اسائنمنٹ نہیں بنا کر دی۔۔۔۔۔۔۔ میں نے نا میاؤں کو بھی آپکی شایت لگائی ۔۔۔۔

اس کی گود میں بیٹھے اس کی شرٹ کے بٹنوں سے کھیلتی اسی کی شکایت لگاتے اسکو اتنی پیاری لگی کہ اس کا دل کیا کہ یہ وقت یہیں ٹھہر جائے ۔۔۔۔۔

تو پھر میاؤں نے کیا بولا۔۔۔۔۔

آنکھوں سےچشمے کا پہرہ ہٹایا گیا۔۔۔۔۔۔

اس نے بولا کہ آپ سے ناراض ہو جاؤ۔۔۔۔اسلیے میں آپ سے ناراض ہوں اب۔۔۔

ناراضگی کا یاد آتے ہی اٹھنا چاہا لیکن مقابل کا حصار مظبوط تھا۔۔۔۔

یہ بلی ۔۔۔۔۔ دل میں اسکو سو صلواتیں سنائی جس نے اسکی بیوی کو ناراض کر دیا تھا ۔۔۔۔ اسکو سمجھ نہیں آتا تھا کہ اسکی بیوی آسٹریلین بلی کی باتیں سمجھ کیسے جاتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔

میری جان کو پتا ہے کی میں نے کیوں نہیں بناکر دی آپکا اسائنمنٹ ۔۔۔۔

اسنے اس سے سوال پوچھا۔۔۔۔ جس پر اس کے نفی میں سر ہلانے پر دوبارہ گویا ہوا ۔۔۔۔

کیونکہ میری جان۔۔۔۔۔ بہت لائک ہے۔۔۔۔ وہ سب سے اچھی اسائنمنٹ بنا سکتی ہے۔۔۔۔ جب آپ خود کروں گی نا میری جان ۔۔۔۔ تو اگر آپ کو نہیں بھی بنانے آتی ہوں گی نا تو آپ سیکھ جاؤ گی۔

اس نے اس کے ہاتھ کو تھامتے اسکو پیار سے بتانا شروع کیا۔۔۔ وہ جانتا تھا کہ اسکی بیوی بہت معصوم ہے۔۔۔۔۔ اور وہ یہ بھی جانتا تھا کی اس کی بیوی اس کی ساری باتیں سمجھ جاتی ہے۔۔۔۔۔

بان لیکن۔ سر نے کہا تھا کہ جس کی اسائنمنٹ سب سے اچھی ہو گی نا ۔۔۔ اسکو سرپرائز ملے گا۔۔۔۔۔ اگر میری اچھی نہیں بنی تو مجھے سرپرائز کیسے ملے گا۔۔۔۔

اپنی اصل پریشانی بتائی وہ سرپرائز چاہتی تھی۔۔۔۔۔۔۔

میری جان جب اپنی محنت سے دل لگا کر بنائے گی۔ ۔۔۔۔۔ تو اس کو سرپرائز مل جائے گا۔۔۔

اسکو کھڑا کرتے کہا۔۔۔۔

اوکے میں خود بناؤں گی ۔۔۔۔ اپنی محنت سے۔۔۔۔

اس نے خوش ہوتے اسکو بتایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گڈ گرل۔۔۔۔۔

اس نے اسکا ماتھا چومتے کہا جس پر وہ خوش ہوتی مسکرا دی۔۔۔۔ جبکہ اپنی بیوی کی معصوم ادا سے اس نے بمشکل نظریں چرائیں۔۔۔۔۔۔۔۔_____

میم ۔۔۔۔۔یہ آپکا بل۔۔۔۔۔۔

اس نے کھانے سے فارغ ہوتے ہی ویٹر کو اشارہ کیا جو اسکا بل کے کر اسکے پاس آیا۔۔۔۔۔

اوکے۔۔ویٹ۔۔۔۔۔۔

بل کی چٹ پر موجود رقم دینے کے لیے اپنے بیگ میں ہاتھ ڈالتے والٹ نکالنا چاہا لیکن یہ کیا۔۔۔۔۔۔

ایک منٹ۔۔۔۔۔۔

زبر دستی اپنے ہونٹوں کو پھیلا کر مسکراتے ہوئے ویٹر کو کہا ۔۔۔۔۔۔

اللّٰہ کہاں گئے میرے پیسے ۔۔۔۔ گھر سے نکلنے سے پہلے ہی تو رکھے تھے ۔۔۔۔ میں نے۔۔۔۔۔

مسلسل اپنے بیگ سے والٹ ڈھونڈنے کے لیے جدو جہد کرتے تنگ آکر اس نے ٹیبل پر بیگ الٹ دیا۔۔۔۔۔

جس پر ویٹر کا دھیان بھی بیگ سے نکلے سامان پر گیا۔۔۔۔ جس میں ۔۔۔۔۔تقریبا زیادہ سامان کاسمیٹکس کا تھا ۔۔۔ کوئی چیز ایسی نہیں تھی جس میں پیسے ہو سکتے ہوں ۔۔۔۔

میم ۔۔۔۔۔اگر آپکے پاس پیسے نہیں تھے تو ۔۔۔۔۔ آپ یہاں کرنے کیا آئی ہیں ۔۔۔۔

ویٹر نے ماتھے پر تیوری چڑھا کر کہا ۔۔۔۔ جو کب سے اس امیرزادی کی اپنے بیگ کے ساتھ جنگ ہوتے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔

دیکھو تمیز سے بات کرو ۔۔۔۔۔ سمجھے۔۔۔۔۔۔۔

ڈھونڈ رہی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور تم جاؤ یہاں سے۔۔۔۔ بلاتی ہوں تمہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔

جوابا اسنے بھی ناگواری سے کہا ۔۔۔۔۔

میں کیوں جاؤں ۔۔۔۔ تاکہ آپ کو بھاگنے کا موقع مل جائے ۔۔۔۔۔۔۔ بے وقوف سمجھ رکھا ہے مجھے کیا۔۔۔۔۔

ویٹر نے بھی جیسے وہاں سے ناجانے کی قسم کھائی ۔۔۔۔۔۔۔

دیکھو تم جانتے نہیں ہو مجھے۔۔۔۔۔۔اقصی منیب نام ہے میرا ۔۔۔۔۔۔۔ تب ہی ایسے بات کر رہے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک تو اس کا والٹ نہیں مل رہا تھا، دوسرا گرنے کے باعث پاؤں میں درد اور رہی سہی کسر یہ ویٹر پوری کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔

کیا ہو رہا ہے یہاں پر۔۔۔۔۔۔

ریسٹورنٹ کا مالک جو کہ شاید راؤنڈ پر نکلا تھا ۔۔۔ ان کو ایسے دیکھ ان کی طرف چلا آیا۔۔۔۔۔۔۔

سر ۔۔۔ یہ میڈم کھانا کھا چکی ہیں ۔۔۔۔۔ اب بل نہیں ہے نہیں کر رہی ہیں۔۔۔۔۔کہتی ہیں والٹ نہیں مل رہا ہے۔۔۔۔۔۔

ویٹر نے مالک کو دیکھ ادب سے کہا۔۔۔

دیکھیں میڈم۔۔۔۔ یہ ہمارا روز کا کام ہے۔۔۔۔ بہت سے لوگ یہ ڈرامے کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔ آپکی باتوں سے ہمارے پر کوئ اثر نہیں ہو گا ۔۔۔۔ تمیز سے پیسے نکال کر یہاں رکھیں۔۔۔۔۔۔۔نہیں تو آپ آج برتن دھوئیں گی یہاں کے ۔۔۔۔۔۔۔

مینیجر تو شاید ویٹر سے بھی بد لحاظ تھا ۔۔۔ تبھی تمیز کے دائرے کو پار کرتے اس سے محاطب ہوا ۔۔۔۔۔۔۔

جبکہ اس نے خیالوں میں اپنے آپ کو برتن دھوتے دیکھ جھرجھری لی ۔۔۔۔ یہ کام تو اس نے کبھی گھر میں نہیں کیا تھا ۔۔۔۔۔۔ ظاہر سی بات ہے جن کے گھر میں نوکروں کی فوج ہوں وہ کہاں ایسے کاموں کے عادی ہوتے ہیں۔۔۔۔۔

اس نے بےبسی سے اردگرد نظریں دوڑائیں کہ ایک جگہ نظریں رکیں اور۔۔۔۔۔۔وہاں پر بیٹھے وجود کو دیکھ کر اس نے سکون کا سانس لیا۔۔۔۔۔۔۔

______

زمیل۔۔۔۔۔۔۔

اپنے عقب سے آنے والی آواز پر اس نے جونہی نظریں آواز کی سمت میں اٹھائی وہاں پر اقصیٰ کو دیکھ اسکی آنکھوں میں حیرت بالکل نہیں اترتی کہ وہ اکثر گھر سے باہر ہی پائی جاتی تھی ۔۔۔۔۔۔

اقصیٰ تم۔۔۔۔یہاں ۔۔۔۔۔

مصنوعی حیرت کا اظہار کرتے پوچھا گیا۔۔۔۔۔۔

وہ زمیل ایکچولی۔۔۔۔۔۔۔میرا والٹ گم ہو گیا ہے۔۔۔۔۔ اب میں نے بل دینا ہے اور ۔۔۔۔۔ میرے پاس پیسے نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اقصیٰ نے پریشانی سے زمیل کو بتایا۔۔۔۔۔۔

اقصیٰ، زمیل کی پھوپھو کی بیٹھی تھی۔۔۔۔۔اور اکلوتی بہن تھی۔۔۔۔ اس کے علاوہ زمیل کی منگیتر بھی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اقصی آپی۔۔۔۔۔۔ آپ یہاں۔۔۔۔۔ کیسی ہیں؟

زمیل کے جواب دینے سے پہلے ہی انشراح جو آبان کے ساتھ آرہی تھی۔۔۔۔۔ اس کو یہاں دیکھ کر حیرت زدہ ہوئی۔۔۔۔۔۔۔

ہاں نشا۔۔۔۔ میں شاپنگ کے لیے نکلی تھی۔۔۔۔۔ لیکن آج کا دن ہی برا تھا ۔۔۔۔۔میرے۔۔لیے۔۔۔

اقصیٰ نے اس سے ملتے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔

آپ لوگ بیٹھو۔۔۔۔۔۔ہم آتے ہیں۔۔۔۔۔۔

زمیل نے اقصیٰ کو اشارہ کرتے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔

ہاں ہاں ۔۔۔۔۔ جاؤ۔۔۔۔۔ ہم نے کونسا منع کیا ہے۔۔

آبان نے زمیل کو دیکھتے شرارت سے کہا۔۔۔جس پر زمیل کا دل کیا کہ اس ڈرامے باز کا منہ توڑ دے۔۔۔۔۔۔

نشا بےبی۔۔۔۔۔ بیٹھ بھی جاؤ۔۔۔کہ میری گود میں بیٹھنا ۔۔۔۔۔۔۔

اس نے انشراح کو مسلسل کھڑے دیکھ کہا جو زمیل اور اقصیٰ کو مینیجر سے بات کرتے دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔

بان۔۔۔۔۔آپ نہ بہت بے شرم ہیں۔۔۔۔۔

اس نے اس کی بات پر چھنپتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔

نشا جان۔۔۔۔۔ میں سوچ رہا ہوں۔۔۔۔ کہ اب رخصتی نہ کر والیں۔۔۔۔۔۔۔

آبان نے سنجیدگی سے اسکو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔جب کی آنکھوں میں صاف شرارت دیکھی جا سکتی تھی۔۔۔۔۔۔۔

یار ہم سمجھے ۔۔۔۔تم لوگ ڈیٹ شیٹ پر جا رہے ہو ۔۔۔۔۔ لیکن تم لوگ تو مینجر کے پاس سے ہو کر آگئے ۔۔۔۔۔۔۔

آبان نے اقصیٰ کو دیکھتے کہا۔۔۔۔۔۔ جس پر اقصیٰ نے ایک نظر زمیل کو دیکھتے اس کی طرف رخ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس دوران ویٹر کھانا لگا کر جا چکا تھا۔۔۔۔۔۔

آبان۔۔۔تم بھی کیا بات کرتے ہو۔۔۔۔۔ تمہارے دوست کا رومینس سے دور دور تک تعلق نہیں ہے۔۔۔۔۔۔کبھی یہ نہیں ہوا کہ منگیتر کو ایک پھول ہی دے دوں۔۔۔۔۔۔

اس نے ایک شکوہ بھری نظر سے زمیل کو دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔جبکہ اس کی بات زمیل کی آنکھوں میں آنی والی نا گواری آبان اور انشراح کی آنکھوں سے چھپی نہ رہ سکی۔۔۔۔

جبکہ وہ اس بات سے بے پرواہ زمیل کی شکائیتوں میں لگی رہی۔۔۔۔ یہ جانتے ہوئے بھی کہ اس کو کتنا برا لگتا ہے۔۔۔۔۔اس کے منہ سے یوں بے باک گفتگو۔۔۔۔۔۔۔وہ بھی اس انسان کے لیے جو اسکا نامحرم ہو۔۔۔۔۔

زمیل اور اقصیٰ کی منگنی دونوں خاندانوں کی پسند سے ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔اس سے زمیل کو بھی کوئی اعتراض نہیں تھا کہ وہ کسی کو پسند نہیں کرتا تھا۔۔۔۔ اس لیے اس نے اپنے والدین کی پسند کو ترجیح دی۔۔۔۔۔جبکہ اقصیٰ وہ تو ہمیشہ سے ہی زمیل پر بری طرح فریقتہ تھی۔۔۔۔۔وہ زمیل پر اپنا حق سمجھتی تھی۔۔۔۔۔۔اس کے برعکس زمیل کے طرف سے کبھی کچھ ظاہر نہ ہوا تھا۔۔۔۔۔ لیکن اس بات سے آبان واقف تھا کہ وہ اقصیٰ کو بہت ضبط سے برداشت کرتا تھا۔۔۔۔۔کجا کہ اس کو ایسی لڑکیوں سے سخت نفرت تھی۔۔۔جو نا محرم اور محرم کے فرق کو نہ سمجھتی۔۔۔۔ بے شک وہ اسکا منگیتر تھا۔۔۔۔ لیکن اس کو اسکی اس قدر نزدیکی بالکل پسند نہیں تھی۔۔۔۔ جس کا اظہار وہ وقتاً فوقتاً کرتا رہتا تھا۔۔۔۔جس پر ہمیشہ اقصیٰ کو شکوہ ہوتا تھا۔۔۔۔۔۔۔

آپی۔۔۔۔ کیا یہ مینیجر آپ کو تنگ کر رہا تھا۔۔۔

انشراح نے فکر مندی سے پوچھا ۔۔۔۔۔

وہ دو ٹکے کا مینجر۔۔۔۔۔ اسکی اوقات ہے کہ مجھے یعنی اقصیٰ منیب کو تنگ کرے ۔۔۔ وہ تو میرا والٹ پتہ نہیں کہا گیا تھا۔۔۔۔ میرے پاس بل دینے کے لیے پیسے نہیں تھے تو۔۔۔۔تمہارے بھائی کو ساتھ اسلیے لے کر گئی۔۔۔۔

اقصیٰ نے اپنے مخصوص مغرورانہ انداز میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تمہارا والٹ گیا کہاں تھا۔۔۔۔۔ کیا گھر سے نہیں لائی تھی ۔۔۔۔۔۔ یا کہیں گر دیا ۔۔۔۔

اب کہ سوال زمیل کر طرف سے آیا۔۔۔۔ جس پر اس نے کندھے آچکا دیے ۔۔۔۔۔۔اس کے نزدیک کو نسا پیسوں کی کمی تھی۔۔۔۔۔جو ان پیسوں کے لیے پریشان ہوتی۔۔۔۔۔

رائے کا اظہار لازمی کریں۔۔۔۔۔۔

اب تک کی اقساط کیسی لگی ۔۔۔۔

 

Urdu Novelsnagri is a website where you can find all genres, Rude Heroine, Novels 2022, from romance to tragedy, from suspense to action, from funny to horror and many more free Urdu stories.

 

Also Give your comments on the novels and also visit our Facebook page for E-books . Hope all of you enjoy it.

Leave a Comment

Your email address will not be published.