Rude heroine romantic novel | Novels 2022 | QAID JUNOON | Ep_10

Rude heroine romantic novel | Novels 2022 | QAID JUNOON |Ep_10

Rude heroine romantic novel | Novels 2022 | QAID JUNOON | Ep_10

 
Novelsnagri.com is a platform for social media writers. We have started a journey for all social media writers to publish their content. Welcome all Writers to our platform with your writing skills you can test your writing skills.

 

 

قیدِ_جنون 

قسط_نمبر_دس

از قلم:فائزہ_شیخ 

 

___________________________________

 

شام کے سائے ہر طرف پھیلے ہوئے تھے ۔۔۔۔چرند،پرند اپنے آشیانوں کے رخ کر چکے تھے۔۔۔۔۔زمیل اور انشراح اقصیٰ کو اپنے گھر ڈراپ کر کے گھر آ چکے تھے اور اس وقت مرتضی صاحب اور زیب النساء بیگم کے پاس ان کے کمرے میں بیٹھے چائے سے لطف اندوز ہو رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔

ان کی بچپن سے عادت تھی کہ وہ روز رات سونے سے پہلے کچھ دیر اپنے والدین کے پاس بیٹھتے تھے۔۔۔

اور اس میں کوئی شک نہیں تھا کہ یہ ایک بہت اچھی عادت تھی۔۔۔۔۔ورنہ آج کل کی اولاد اپنے کاموں میں مصروف یہ بھول جاتی ہے کہ ان کے والدین بھی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔

اور بتاؤ برخودار بزنس کیسا جا رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔

مرتضی صاحب نے کمرے میں بیٹھے صوفے پر بیٹھے بیٹے سے پوچھا۔۔۔۔۔

بہتر ہے بابا۔۔۔۔۔

اس نے چائے کا کپ ہونٹوں سے لگاتے کہا۔۔۔۔۔

زمیل اپنی پڑھائی مکمل کرنے کر بعد مرتضیٰ صاحب کے ساتھ بزنس سنبھال رہا تھا۔۔۔۔۔ لیکن مرتضی صاحب کی طبیعت خرابی کے باعث ان کو کچھ مہینے آرام کا مشورہ دیتے خود اکیلا سب کچھ سنبھال رہا تھا۔۔۔۔

ماما ۔۔۔۔۔ آپ کو پتا ہے کہ آج ہمیں ریسٹورنٹ میں آپی اقصیٰ ملیں۔۔۔۔۔۔

انشراح نے یاد آتے ہی ماں کو بتایا۔۔۔۔۔

یہ کون سا نئی بات ہے ۔۔۔۔۔ بیٹا۔۔۔ وہ اکثر باہر ہی پائی جاتی ہے۔۔۔۔ تو اس سے ملنا کون سا مشکل ہے۔۔۔۔

زیب النساء نے سادہ سے لہجے میں کہا ۔۔۔ ۔

انکو بھی اقصیٰ اپنے بیٹے کے لیے کچھ خاص پسند نہیں تھی۔۔۔۔۔لیکن مرتضی صاحب تھے جو بہن کی بیٹی کو بہو بنانا چاہتے تھے۔۔۔۔۔۔۔

تمہارے کہنے کا مطلب کا ہے بیگم ۔۔۔۔۔ بچی کھیلنے کودنے گئی ہو۔۔۔۔۔۔انجوائے کی عمر ہے اسکی۔۔۔۔۔۔

ہمیشہ کی طرح مرتضی صاحب نے بھانجی کے حق میں آواز اٹھائی۔۔۔۔۔

۔آپ بھی کیا بات کرتے ہیں۔۔۔۔ وہ اکیس سالہ لڑکی۔۔۔ بچی کہاں سے ہے جو۔۔۔۔ کھیلنے کے لیے بازاروں کا رخ کرے گی ۔۔۔۔۔

زیب النساء بیگم نے اس لہجے میں کہا کہ ان کی باتیں سنتے زمیل اور انشراح اپنا قہقہہ نہ روک پائے۔۔۔۔۔۔۔

ہنس لو۔۔۔۔۔ میری بھانجی پر۔۔۔۔ چاند کا ٹکڑا ہے وہ۔۔۔۔۔۔۔جب اس گھر میں بہو بن کر آئے گی نا۔۔۔ تو تم لوگ صدقے واری ہو گے۔۔۔دیکھ لینا۔۔۔۔۔۔

انہوں نے چڑتے ہوئے کمرے سے باہر کا رخ کیا۔۔۔۔۔۔

ماما پاپا کی بھانجی کیا سچ میں چاند کا ٹکڑا ہے۔۔۔۔۔۔

زمیل نے شرارتا ماں سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔

نہیں ماما بھیا کو بتائے ۔۔۔کہ چاند گرہن ہیں وہ تو۔۔۔۔۔۔۔

انشراح نے ماں کے لہجے میں جواب دیا اور ایک بار پھر ان سب کو قہقہہ لگانے پر مجبور کیا۔۔۔۔۔۔۔

مرتضیٰ صاحب دوسرے کمرے میں جا چکے تھے اور اب ان ماں۔۔بچوں کی باتیں رات گئے تک چلنی تھیں۔۔۔۔۔۔

چلتی پھرتی ہوئی آنکھوں سے اذاں دیکھی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔

میں نے جنت تو نہیں دیکھی ہے ماں دیکھی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

______

بےبے ۔۔۔۔کی طبیعت ٹھیک ہے نا۔۔۔۔۔

دن کو واپسی پر بےبے کو سب سامان دے کر داؤد کو ان کے خیال کی تاکید کرتے وہ بستی کا چکر لگانے چلی گئی تھی۔۔۔۔۔اب اسکی واپسی ہوئی تھی۔۔اور شام کے سائے پھیل رہے تھے۔۔۔۔صحن میں داؤد کو بیٹھے دیکھ پوچھا۔۔۔۔۔

جی باجی۔۔۔۔بےبے کی طبیعت اب ٹھیک ہی وہ سو گئی تھی تو میں باہر آگیا تھا۔۔۔۔۔

ویسے باجی۔۔۔۔یہ آج تو تم بہت بڑا ہاتھ مار کر آئی ہے ۔۔۔۔ کس جو لوٹا ہے ۔۔۔۔۔۔ تم نے ۔۔۔۔

طلحہ نے چوکری مار کر بیٹھتے اشتیاق سے پوچھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔

میں تو ۔۔۔۔سمجھی تھی کہ اس والٹ میں بہت پیسہ ہو گا۔۔۔۔ لیکن سیب، آم اور بےبے کی دوائی اس میں سے بمشکل لے پائی میں۔۔۔۔ ختم ہو گیا سارا پیسہ اب تو ۔۔۔۔۔۔۔

اس نے افسوس کرتے کہا ۔۔۔۔۔۔

تو باجی۔۔۔ صبح پھر کام پر جائے گا کیا۔۔۔۔۔

بلال نے پوچھا۔۔۔۔۔۔کام پر جانے سے اسکا مطلب چوری کرنے کا تھا ۔۔۔۔۔۔۔

اور کیا۔۔۔۔اگر چوری نہیں کرے گا تو کیا تو لائے گا۔۔۔۔۔ہمارے لیے کھانا۔۔۔جسکو کھا کر اپن لوگوں کا پیٹ بھر جائے گا۔۔۔۔۔

ماورا نے اکتا کر کہا ۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔

اوئے بس کرو تم۔۔۔۔ سوجاؤسب جا کر۔۔۔۔۔ صبح سویرے اٹھ کر بےبے کے لیے نماز پڑھ کر دعا بھی کرنی ہے۔۔۔۔۔۔۔

اس نے سب کو اٹھنے کا حکم دیتے خود بھی اندر کا رخ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔

_____

ماما میں کہہ رہا تھا کہ کیوں نا آپ کی بہو کو گھر لے آئیں ۔۔۔۔۔۔

اس نے رضیہ بیگم کے پاس بیٹھتے مسکاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔

ہاں ۔۔۔میں سوچ رہی ہوں ۔۔۔ کہ۔۔۔۔۔

ابھی رضیہ بیگم کی بات منہ میں ہی تھی کہ وہ چہکا۔۔۔۔۔۔۔

کیا آپ انشراح کی رخصتی کا سوچ رہی ہیں۔۔۔

ماں کی بات کاٹتے ماں کا منہ چومتے کہا ۔۔۔۔

ارے برخودار۔۔۔۔۔ یہ ذرا اپنی ماں کی مکمل بات تو سن لو۔۔۔۔۔

شہباز صاحب جو بظاہر کتاب پڑھنے میں محو تھے لیکن ان کا سارا دھیان ان ماں بیٹے پر ہی تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آبان کی بات سن کر بولے۔۔۔۔۔۔۔۔

بابا۔۔۔۔۔۔آپ تو چاہتے ہی نہیں کہ آپ کا بیٹا شادی شدہ کہلائے۔۔۔۔۔۔۔

اس نے انکو دیکھتے شکوہ کرنے والے انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔

برخودار آپ شادی شدہ ہی ہیں۔۔۔۔

جی لیکن میں پورا شادی شدہ نہیں ہو نا۔۔۔۔

اس نے منت بھری نظروں سے دونوں کے دیکھتے ہوئے کہا کہ۔۔۔۔ کوئی تو اس پر ترس کھا کر اسکی بیوی کی رختصی کر وادیں۔۔۔۔

میری بات تو سن لیں ۔۔۔۔۔

رضیہ بیگم نے دونوں باپ بیٹے کو ایک دوسرے سے لگے دیکھ کر جھنجھلاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔

ماما میری شادی۔۔۔۔

چپ کرؤ۔۔۔۔ پہلے میری بات سنیں۔۔۔۔۔۔

آبان کی مسلسل ایک ہی تقرار پر رضیہ بیگم نے اس کو گھوری سے نوازتے اپنی بات جاری کی۔۔۔۔۔

میں کہہ رہی ہوں۔۔۔۔ آپ اب ریحان کو بلا لیں۔۔۔۔اس کی شادی کریں گے ہم ۔۔۔۔۔کوئی اچھی سی لڑکی دیکھ کر ۔۔ ۔

میرے گھر میں بھی رونق آئے گی ۔۔۔بہو آئے گی ۔۔۔۔ پھر بچوں کی کھلکھلا ہٹیں گونجیں گی۔۔۔۔۔۔

رضیہ بیگم نے اشتیاق سے کہا۔۔۔۔۔ جس پر آبان ماں کو دیکھ کر رہ گیا جو آنکھیں بند کیے مسکراتے کہہ رہی تھی ۔۔۔ جبکہ شہباز صاحب نے دونوں کو دیکھ کر مسکراہٹ دبائی۔۔۔۔۔۔۔

ماما ۔۔۔۔ یہ کیا بات ہوئی۔۔۔۔۔ بھائی کی شادی۔۔۔۔۔ کروانے پر راضی ہیں ۔۔ ۔ ۔لیکن میری نہیں کروانی۔۔۔۔۔واہ کیا بات ہے ۔۔۔

وہ تو حقیقتاً ہی چڑ گیا کہ اسکی بیوی کو لانے پر کوئی راضی ہی نہیں۔۔۔۔

بیٹا جی۔۔۔۔ جب تک انشراح کی تعلیم مکمل نہیں ہوتی تب تک آپ۔۔۔۔ شادی کے بس خواب ہی دیکھ سکتے ہو ۔۔۔۔۔

شہباز صاحب کی بات نے اس کو مزید ترکہ لگا دیا۔۔۔۔۔۔۔جس پر وہ دونوں سے ناراضگی کا اظہار کرتے منہ موڑ کر بیٹھ گیا۔۔۔۔۔۔۔

_____

شہباز صاحب اور رضیہ بیگم کو اللّٰہ تعالیٰ نے دو بیٹوں سے نوازا تھا ۔۔۔

بڑا بیٹا “ریحان شہباز”جو کہ لندن میں پڑھائی کے سلسلے میں گیا تھا اور ابھی تک ادھر ہی مقیم تھا۔۔۔۔ وہ اٹھائیس سالہ ایک خوبصورت گبرو جوان تھا ۔۔۔۔۔۔

چھوٹا بیٹا”آبان شہباز” چھبیس سالہ نوجوان تھا ۔۔۔ جس کی رگ ظرافت ہر وقت پھرکتی رہتی تھی۔۔۔ وہ اپنی تعلیم مکمل کرنے کے بعد شہباز صاحب کے ساتھ بزنس چلا رہا تھا۔۔۔۔۔۔

_______

دیکھنا اللّٰہ نے تیرے لیے ۔۔۔۔ ایک شہزادہ اتارا ہوگا۔۔۔۔۔ اور وہ جلد ہی تجھے اپنے ساتھ اپنی دنیا میں لے جائے گا۔۔۔۔۔۔۔جہاں تم دونوں ہمیشہ ہنسی خوشی مسکراتے ہوئے رہو گے ۔۔۔۔۔۔۔۔

روز کی طرح آج بھی بےبے کے منہ سے اپنے لیے ایسی بات سن اس کے ہونٹ بڑے خوبصورتی سے مسکائے۔۔۔۔۔۔

کیا بےبےتو بھی نا۔۔۔۔۔ایسا کچھ نہیں ہونے والا۔۔۔۔۔۔ میرے لیے کوئی شہزادہ نہیں اترنے والا کہ میں کوئی شہزادی نہیں ہوں ۔۔۔۔۔ ایک چورنی ہوں ۔۔ چورنی۔۔ جو لوگوں کی جیبیں کاٹ کر اپنا گزر بسر کرتی ہے۔۔۔۔۔۔۔ میرے نصیب میں کوئی شہزادہ نہیں۔۔۔۔۔۔ہاں ایک چور ہو سکتا ۔۔۔۔۔ کیونکہ شہزادہ فقط کسی شہزادی کے لیے ہی ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔

اس نے نیچے فرش پر ایک چادر بچھاتے خود اس پر لیٹتے کہا۔۔۔۔۔

اس گھر میں ایک چارپائی تھی جس پر بےبے سوتی تھی۔۔۔۔ جبکہ بےبے کے ساتھ اس کے کمرے میں ماورا زمین پر چادر بچھا کر سوتی تھی۔۔۔۔۔

اور دوسرے کمرے میں باقی بچوں کے لیے بستر لگایا جاتا تھا۔۔۔۔

اےےے کملی ہے تو۔۔۔۔ تجھے کیا پتا نصیبوں کا کھیل ۔۔۔۔۔یہ تو اوپر والا ہی طہ کرتا ہے ۔۔۔اور میرا دل کہتا ہے ۔۔۔۔ کہ رب سوہنا تجھے تیرے شہزادے سے ضرور ملائے گا۔۔۔۔۔۔اک دن

دیکھ لینا تو۔۔۔۔۔۔

بےبے نے اسکی عقل پر ماتم کرتے کہا۔۔۔۔۔

دیکھ بےبے ۔۔۔۔ تو نا سو جا۔۔۔۔۔۔اب۔۔۔۔مجھے بھی نیند آرہی ہے۔۔۔۔۔۔۔ایسا کچھ نہیں ہونے والا

اس نے مسلسل بےبے کی ایک ہی بات سے تنگ آتےکہا۔۔۔اور آنکھیں موند لی ۔۔۔۔۔

وہ ڈرتی تھی کہ وہ خواب نہ دیکھنے لگ جائے جن کی کوئی تعبیر نہ تھی۔۔۔۔۔۔۔

وہ حقیقت پسند لڑکی تھی۔۔۔۔ اور سپنوں کی دنیا میں جینے سے بھی ڈرتی تھی۔۔۔۔۔

______

اقصیٰ سنبھل جاؤ تم۔۔۔۔آج پھر رات کے بارہ بجے تم گھر آرہی ہو ۔۔۔۔۔حد نہیں ہو گئی۔۔۔۔۔۔

وہ جو رات کو بارہ بجے گھر میں داخل ہوئی تھی اپنی ماں کی آواز سن کر اس کے منہ کا زاویہ بھر پور انداز میں بگڑا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ماما ۔۔۔۔ پلیز یہ میلو ڈرامہ صبح سٹارٹ کرنا۔۔۔۔ابھی میں سونا چاہتی ہوں۔۔۔۔

اس نے ماما کو دیکھتے ہوئے بیزاری سے کہا ۔۔۔۔ جس پر بشریٰ بیگم کی ماتھے پر بل واضح ہوئے۔۔۔۔۔۔

یہ جو تمہاری حرکتیں ۔۔۔۔ نا تمہارے باپ کو پتہ چل گئی نا پھر دیکھنا اور بھائی جان نے تو منہ پر رشتے کے لیے نہ کر جانا ہے ۔۔۔۔ پھر دیکھتی رہنا زمیل کے خواب ۔۔۔۔

بشریٰ بیگم نے اس کو ہمیشہ کی طرح سمجھانا چاہا۔۔۔۔۔ لیکن اس نے ہمیشہ کی طرح ان کی بات کو نظر انداز کیا۔۔۔۔

ماما۔۔۔۔ میں اقصیٰ ہوں۔۔۔۔۔ لڑکے مرتے ہیں مجھ سے بات کرنے پر ۔۔۔۔۔۔ اپنے آپ کو ریجیکٹ کرنے کی اجازت میں زمیل کو بھی نہیں دیتی کہ مامو کس کھیت کی مولی ہیں۔۔۔۔۔۔۔

اس نے انتہائی بدتمیزی سے کہا کہ بشریٰ بیگم اس کو دیکھ کر رہ گئی۔۔۔۔۔۔

اقصیٰ تمیز سے مامو ہیں تمہارے۔۔۔۔ کتنا پیار کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔تم سے۔۔۔۔۔۔

بشریٰ بیگم نے اس کو ڈپٹا۔۔۔۔۔۔

کم اون ماما۔۔۔۔۔پلیز نو ڈرامہ ۔۔۔۔۔بائے۔۔۔

ماں کو ہاتھ ہلاتے اپنے کمرے کا رخ کیا۔۔۔ جبکہ بشریٰ بیگم اس کو کچھ کہہ بھی نہیں پائی ۔۔۔۔غلطی بھی تو انہیں کی تھی۔۔۔۔۔اکلوتی اولاد ہونے کی وجہ سے اس کی ہر جائز ، ناجائز خواہش پوری کی تھی انہوں نے۔۔۔۔۔۔اس کو منیب صاحب کی ڈانٹ سے بھی وہ ہی ہمیشہ بچاتی تھی۔۔۔۔۔یہی وجہ تھی کہ ماں کا بے جا لاڈ پیار اس جو ضدی اور خود سر بنا گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کیسی لگی آج کی قسط۔۔۔۔۔

 

 

Continued………

Urdu http://Novelsnagri.com is a website where you can find all genres, Rude heroine romantic novel, Novels 2022, from romance to tragedy, from suspense to action, from funny to horror and many more free Urdu stories.

Also Give your comments on the novels and also visit our Facebook page for E-books . Hope all of you enjoy it.And also visit our channel for more novels

https://youtube.com/channel/UCKFUa8ZxydlO_-fwhd_UIoA

 

 

Leave a Comment

Your email address will not be published.