Gharoor-e-Ishq Ka Hankpan, Urdu Novels,

Urdu Novels |Rude hero based Romantic Novels| Gharoor-e-Ishq Ka Hankpan|2022

Urdu Novels| New Famous Romantic Novel|Gharoor-e-Ishq Ka Hankpan|2022

Gharoor-e-Ishq Ka Hankpan by Sara Urooj Novel PDF Download, Online complete novels, afsanay, PDF Urdu Books, Online Urdu Books Free Download in PDF.

 
Gharoor E Ishq Ka Hankpan
 
Read Full Novel Here 👇
 

 

 

 # غرورِ_ع شق_کا_ ہا نک پ ن

 #از_سارہ_غروج

 نہ پں صاحب ا یسا مت کر یں رحم کر یں  ہم پ ر۔۔۔م پں آپ کے  ناوں   پڑ تی  ہوں ۔ا پ نے   بچے کی ز ندگی ما نگت ی  ہوں ۔۔

م یری  ب ی

نے سے  بھول  ہو  چکی  ہے وہ  ناداتی کر گ یا       ہے  پر صاحب  جی  اس کو سزا  نہ کر یں۔۔۔معاف کر د یں۔

       وہ  بے ی س ماں  اس  ش خص کے سا م نے گڑگڑا        بے  ہو          بے رحم کی ا پ یل

 کر ر ہی بھی۔۔۔

  چاموش!!!!

 تم  چا پت ی  ہو  نہ  ہمارا رواج  ہے کہ کو تی  بھی گاوں سے ناہر سادی  نہ پں ک رنا  ہم  چو ہدری  بھی نہ  ہمت  نہ پں کر بے  بھر  تم  ج یسے  حھو بے ط ب قے کے لوگ  نہ  جرت ک یسے کر گزرے؟؟

س ف ید ک رنا  سلوار م پں مل بوس اس  پر کالے  رنگ کی واسک ٹ  نہ         نے غصےسے  بولے  بھے کہ ان کی دھاڑ سے و ہاں مو چود سب لوگ د ہل گ نے  بھے  حب کہ وہ عورت رو تی  ہو تی ان کے        قدموں م پں گری بھی۔

                         صاحب اگر آپ کی   بچے ا یسا کر بے  بو آپ  پب  بھی  نہی  فب صلہ

 کربے۔۔۔؟؟؟

                                                                                          وہ عورت  ناام ید  ہو بے  ہو بے  بولی۔۔۔۔

            چدا گواہ  ہے اگر  نہ  بھول م یری  ب یت ی نا  ب ی  

یا کر گزربے بو آج اس کے سا بھ  بھی  نہی سب  ہو نا ۔۔

وہ آدمی  غرور سے کہ یا و ہاں سے  نکل یا  چلا گ یا  حب کہ  چا بے  ہو بے و ہاں کھڑے ا پ نے آدمی کو ا سارہ ک یا  بھ ا  جسے س

م جھ کر اس کے آدمی بے  ہاں

                                                                                                                                                  م پں سر  ہ

لا نا بھا۔۔۔

 بھوڑی دپ ر ن عد  ف صا م پں ا نک   چیخ  نل ید  ہو تی  بھی۔ا ن  ک  مرد ۔د ف یاب وسی رسمکی و جہ سے ا پت ی  چان گواہ  ب یٹ ھا ا نک عورت اسی رسم کی و جہ سے   پ بوہ  ہو  گ

تی۔

ا فق سے  نکل نے سورج کی ک ربپں چان چو نلی کی درو دبوار  پر  پڑ ر ہی بھ پں  پ  رندے و ہاں پ ر  پ نے  چون صورت  نا  غی چے م پں آ کر   بیٹ ھے  چہ چہا بے  ہو بے ا نک موس ب

                                                                                                                                        قی پ ر نا کر ر ہے بھے۔۔

ا یسے م پں و ہاں کے  مرد زم ی بوں  پر گ نے ،  چ یکہ پ زرگ ح

ضرات مردان چا بے م پں   بیٹ ھے ح قہ  ب ی نے  ہو بے  نا بوں م پں م ش غول  بھے۔ گھر کی  چوا ب پن  ناور جی  چا بے م پں کھا نا  پ یا ر ہی  بھ پں۔

 گلِ مومن ہ۔۔۔

 رک  چاو کہاں  بھاگ ر ہی  ہو گر  چاو گی؟؟

 گھر  چلو ا نا لوگ آ گ نے  ہو نگے۔۔۔

                                                                                         شحر  بے گل کو آواز لگا بے  ہو بے  کہا۔۔

وہ  چو لاپ رواہ سی  ندی کے  ناس  ت یز  ت یز  قدم  بھر ر ہی  بھی  نکدم  نلٹ کر  اس کی  چا پب د نکھا۔

 تم  حپ  نہ پں رہ سکت ی۔آج  ہم ک ی نے دب وں ن عد  نہاں آ         بے  ہ پں۔۔ ہماری یس ید ندہ  چگہ     ہ ے ۔ بورے گاوں م پں۔۔اور موسم سے لطف ل یت ی  پ یل بوں  کی ما پ ید ادھر سے ادھر اڑ ر ہی  بھی۔

  تمہارے مزے کے  چکر م پں  ہم ا نا کے  ہا بھوں  ف یل  ہو نگے۔۔

                                                                        وہ اس کے سر  پر  چ پت لگا بے  ہو بے  بولی۔۔

                          ا حھا  نا  نا نا ۔۔۔ چل نے  ہ پں  

ہم وہ پ را سا من ہ  پ یا کر  بولی بھی ۔۔

“م یری  پ یاری سی سہ یلی  تم  ناراض  نہ ہو نا  ہم مو فع د ن

کھ کر دو نارا تم سے

 مل    نے آب پں گے”

وہ محپ ت سے  ندی م پں ا بھر    بے ا پ نے سا         بے  کو د نکھ نے                ہوبے  بولی بھی اور شحر کے س یگ لہرا        بے  ہو     بے چو نلی کی  چا پب  قدم پ ڑھا        بے۔

                                                                                                                                                 نہ بو چوان کون  ہے؟

وہ دوب وں  ج یسے  ہی چو نلی م پں  پ نے   پی جھے کے را س نے سے دا چل  ہو ب پں  بھی

کسی ا ج ی تی  بو چوان  کو کھڑا د نکھ گلِ مومن ہ ب ولی  بھی  جس کا                  حھ فٹ نکل یا قد ، گھ نے  بھورے  نال  چ و کہ  بھس

                                                                                                  ل کر  نار  نار اس کے ما بھے  پر آ ر ہے

 بھے ۔ا نک  نل کو مومن ہ کی  ن         

ظریں ساکت  ہوتی بھ پں اس جسن کے د بو نا کو د نکھ کر ۔

لگ یا  نہ آ غا  چان کے دور کے کو تی ر س نے دار  ہ پں  چو  نہاں ر ہ نے آ بے  ہ پں ۔۔

                                                                                  نہ پں ۔۔۔ نہ  پ یا ڈراپ  بور  ہے چو نلی کا۔۔

 ہم                                                                    بے پ ڑے ا نا کو کہ نے س یا  بھا  جس م پں ان        بے زکر ک یا  بھا شحر          بے اس کے  چواب م

 پں کہا بھا

  پر کسی  غ یر کو  بو  ا چازت  نہ پں چو نلی م پں ر ک نے کی۔۔

           

افف!!! میری ماں وہ چو نلی کے                                   بجھلی طرف رہ رہا ہے ۔۔چونلی م پں  نہ پں۔۔ ۔

وہ ما بھے  پر  ہا بھ مارے چو نلی کو کاف ی لم یا ک ھی یچ کر  بولی  ۔ جسے سم جھ کرمومن ہ  بے  ہاں م پں سر  ہلا نا  بھا اور ا ندر کی  چا پب  قدم پ ڑھا بے  بھے۔مگر  دھ یان  بھ یک  بھ یک  جر اسی ب و

چوان  پر  چا ر ہا بھا۔

          تم دوب وں لڑکی لوگ ص یح سے ک یا  چہاز  پ یا گھوم ر ہا      ہے ۔۔ماں ،  بھا بھی  تمہارا  ک یچن م پں        ہے  بھوڑا ان کا  ہا بھ  ہی  پ یا دو۔

ندر  پڑے بھے   تی چان کی آواز ان کے کاب وں سے  نکرا تی  بھی  چو کہ  پٹ ھات ی ل ہچے م پں اردو  بول ر ہی  بھ پں۔

 ج یسے  ہی ان دوب وں کے  قدم ا

 تی  چان آپ  چا پت ی  ہ پں  ہم سے  نہ  ک یچن کے کام  نہ پں  ہو    بے  ہ پں۔و یسے  بھی ا نا لوگ  نا ہر گ نے  بھے اسل نے  ہم زرہ ا پ نے گاؤں کا د ندار کر   بے گ نے  بھے۔ وہ ان کے  ب  ح نے  پر ا نہی کے سا بھ  ب یٹ ھ

نے  بولی بھی۔

گل اور شحر  تم دو بوں  چوان  ہو گ یا  ہے ، گھر م پں  ب یٹ ھا کرو اگر  تمہارے ا نالوگوں       بے د نکھ ل یا  بو  تمہارے سا بھ  تمہارا اماں کو  بھی ڈا پٹ س یا        بے گا وہ۔

ا حھا  تی  چان  ہم آپ  یدہ سے چ یال رکھ پں گے وہ دوب وں نانعداری کا م ظا ہرہ ک نے  بول پں

           مہر  چو  ک یچن م پں کام کر ر ہی  بھی  امی کے کہ نے  پر وہ او پر آ تی   کہ  ت یرپ ز

کو کہ پں کسی  ح یز کی  ضرورت  نہ  ہو۔ وہ ا پ نے دھڑ ک نے دل کو س یٹ ھا ل نےآرام سے کمرے کا دروازا کھول ا ندر دا چل  ہو تی  چہاں     کمرے م پں  ت یرپ زکو  نہ د نکھ لم یا سا یس ل یا  بھا ل یکن مہر کا سا یس و ہ پں ا نک گ یا  بھا  حب ا پ نے   پی جھے  چان کی گھمب  یر آواز سن کو س یا  بھا۔۔

وہ  چو  سادی کے ن عد  سہر  چلا گ یا  بھا  آج لو نا  بھا  بورے ا نک مہ ی نےن عد  اس         بے  نل  نل اس کے لو پ نے کا ا پ ب ظار ک یا  بھا مگر وہ ا پ نے

کاموں م پں مضروف  سا ند اسے  بھول  حکا  بھا ن  قول مہر کے مگر  نہ  بو و ہی   چا پ یا  بھا ک یت ی  سدت سے اس           بے ا پت ی  چان کو  ناد ک یا ک رنا  بھا۔۔

مہر                                  بے  نلٹ کر  ب پن  ی س یلی آ نکھوں سے اسکی  چا پب د ن      کھا بھا ، س یاہ آ نکھ پں ان  ی س یلی آ نکھوں سے  نکرا تی بھ پں۔۔

ھی بھی وہ ۔۔

                                ت یر پز  بے محشوس ک یا  بھا ک ی یا  ہی  سکوہ ل نے  ب یٹ

 کی سی  ہو م یری رف بقِ  چاں ؟

 ہا بھوں سے  بھام کر ا پت ی چا پب  کھ ی ی چا  بھا  جس سے وہ س یدھا اسکے ک سادہ

 س ی نے سے آن  نکرا تی بھی۔۔

 کی۔۔کی سی  ہو سکت ی  ہوں؟

اس کی  سرٹ کی  ب پن  نہ  ن ظر یں وہ م قا نل سے  ہی سوال کر گت ی

 بھی۔۔

  نہت  پ یاری۔۔

 سہادت کی ا نگلی سے اسے  چہرے کو او پر کی  چا پب ک یا  بھا  جس سےاسکی  نلکوں کا  حھل مل ک رنا ر فص  ت یر پز  چان کو مسکرا بے  پر  مح بور کر گ یا

 ۔۔

                                              ہا ہا ہا ہا۔۔ پ یگم آپ کا  بو ا بھی سے  نہی چال  ہے۔۔

ا پ یا  سرما تی  ہ پں آپ۔۔۔ نازوں کے گھ یرے م پں ل ی نے ان کو صو                                                   فے  نہ

                                                                                                                                             ل نے   بیٹ

ھے بھے وہ۔۔

 

 آپ کو م یری زرہ  ناد  نہ پں آتی ؟

  ت یر پز  کے ک یدھے  نہ سر  نکا بے وہ  سکوہ کر گ  تی بھی۔ ۔

 نہ پں۔۔م جھے زرہ  ناد  نہ پں آ تی ک ب و نکہ  ناد ان کو ک یا  چا نا      ہے  چو آپ کےذ ہن م پں  نہ  ہوں  چ یکہ آپ کا ی س یرا  بو  ہر و فت  ہمارے دل و دماغ م پں  ہ ونا     ہے ، اس کی دل کی ملکہ  ہ پں آپ مہر۔۔

مہر کے  چہرے کو ا پ نے  ق رپب  پر کر    بے  ہو     بے   کہا  بھا  چ یکہ وہ ا پ نے   چہرے  پر  ت یر پز کی گرم سا یس پں محشوس کر سکت ی  بھی۔۔ ت۔۔ت یر  پز وہ۔۔۔

                مہر کے  حملا مکمل کر بے سے  نہلے وہ  ناکی کا  قاصلہ  بھی م یا  چکے

 بھے۔۔۔

  سام م پں  پ یار ر ہ نے گا ۔۔

اس کو آزادی  ب ح سے ا پ یا ڈر یس ل نے وہ  قر یش  ہو بے  چلے گ نے  چ یکہ مہر

 ا پ نے س ی نے  نہ  ہا بھ ر کھے ا پت ی سا یس  بچال کر ر ہی بھی۔

رنگ  کی قراک  نہ  نار بجی آب چل اوڑھے  ت یرس  نہ کھڑی  بھی ،  ہوا کے  ناغث ڈو پن ہ اوڑھ کر  ت یرس کی

              دو نہر کے و فت  نہا کر مومن ہ کالے              

                                                                                                                           ر نل یگ  نہ ل ی

ک ر ہا بھا ۔۔

        

دھوپ م پں کھڑی وہ کوتی حمک یا ہوا  ہ یرا لگ ر ہی بھی ۔۔

 کو تی گہری  ن ظروں سے اس کوہ  ہ یر کو د نکھ ر ہا  بھا۔۔

ا پت ی د پ یا م پں مگن مومن ہ  بے کسی کی  ن ظروں کو  چود پ ر  محشوس ک یا  بو آس

 ناس د نکھ نے پ ر ، اسی ب و چوان کو  چود کو  نک نے  نا نا  بھا۔۔ چو کہ  ن ظر یں اب   حھکا          بے ا پ نے کام م پں مضروف  ہو  حکا  بھا۔۔

اب  نالکوت ی م پں کھڑی مومن ہ  قارس کو د نکھ ر ہی  بھی مگر     قارس بے دو نارہ

                                                                                                  مڑ کر د نکھ نے کی  غ

لطی  نہ کی بھی۔

 قارس کو چو نلی م پں آ بے  چار مہ ی نے کا غرصہ  پ پت  حکا  بھا ،  نہت  ہی کم

غرصے م پں  ت یر پز  چان کے غز پز اور  قا نلِ اغٹ ماد  پ یدوں م پں  سامل  ہو  حکا

 بھا ۔

چو نلی کے  ہر کاموں م پں  بی ش  بی ش  ہو نا  بھا چ یکہ وہاں کے مک ی بوں کوکہ پں  چا ن ا  ہو نا  بو  نہ کام  قارس  ہی ا ب چام د پ یا  بھا الپ ن ہ    گل مومن ہ کو کالج   پپ سے  نک ا پ یڈ ڈروپ د پ  یا اسی  

ہی کی ذمے داری  ہوتی بھی۔

                                                                                            قارس  تمہاری کالب  ف یک سن ک یا          ہے؟

حھا بھا۔

                                                       گاڑی ڈراپ  بو کر بے  قارس سے مومن ہ    بے  بو

                                                                                                                               جی گ ر بجو ی سن ک یا  ہے۔

 واٹ؟

                  تم گ ر بجو پٹ  ہو اور  نہاں چون لی م پں ا پ یا سر  بھوڑ ر ہے  ہو؟

 ح یرت  ہوتی م جھے۔۔

                         تمہ پں  بو اس و فت کسی ا حھی کم یت ی م پں  ہو نا  چا        ہے ؟؟

م ی ڈم  ہو نا  بو  چا ہ نے مگر  ہر کو تی ا حھی بوسٹ د پ نے کے ل نے ر سوت ما نگ

نے  ہ پں۔

 اگر  تم  چا ہو  بو  ہم  بھا تی سے    ب یسے لے کر دے  سک نے  ہ پں؟

                                                                                              مومن ہ  بے  کجھ سو چ نے  ہو بے کہا  بھا ۔

 نہ پں م یڈم  نہت  سکر نہ آپ کی  بوازش کا، مگر اس کی  ضرورت  نہ پں ۔۔

گاڑی کو  بو  پرن د پ نے  قارس  بے  ق رپٹ مرر سے مومن ہ کے  چہرے کو د نکھا کر کہا۔

  ہمم۔۔ چوداری!!

 اتی ا تم ام یر یسڈ۔۔

 اس         بے سا م نے ڈراپ  بو کر          بے  قارس کے  چہرے  نہ ا نک  ن         ظر ڈالی بھی۔

 ت یر پز کے کہ نے  پر مہر آج دل سے س بوری  بھی اس کے ل نے ، واپ ٹ  رنگکی کل بوں والی  قراک  جس  پر گولڈن ا تم یراپ       

 یڈری  ہوتی بھی ، ڈو پن ہ کو  ن  قاست سے  چود  نہ س پٹ ک نے ، ا پ نے لم نے  نالوں کو کھلا  حھوڑے سرخ  لپ اس یک لگا      بے ، ا پ نے  سو ہر کو  چذ نات  حگا گ            تی بھی۔

 ت یر پز  چو  نا ہر کے کام  تم یا کر  چلدی سے گھر م پں دا چل  ہوا مہر کی  پ یاری

د نکھ کر د نگ رہ گ یا  بھا، چہرے  ن ہ  بی سم ش چا بے  چواب سی کب  ف پت م پں

اس  نک آ نا  بھا  چو کہ  تمام                جشر سماتی سم پت اس کے دل کی د پ یا کو  ہلا

 گ           تی بھی۔

  پری  ہو  نا  تم  ہو  پر بوں کی را تی  نا  ہو م یری  پر تم کہات ی؟

 سہادت کی ا نگلی سے اس کے  چہرے کو او پر ک یا  بھا  چ یکہ  ن ظر یں اس کے  چہرے کے  ہر ا نک  ن قش کا طواف کر ر

ہی بھ پں۔

 م پں نہت  چوش  نص پب  ہوں  چو چا ندان کا  ہ یرا میرے  نام  ہوا          ہے۔

 محپ ت سے  چور ل ہچے م پں کہ یا وہ اس کی سا یشوں کو  قان ض کر گ یا  بھا۔

محپ ت  بھری گس یا جی ک نے  ج یسے وہ   پی جھے  ہ یا  بو  ن ظر یں مہر کے لال گلا تی  چہرے  نہ  نک گت ی  بھ پں  چہاں چ یا کے  

رنگ واضح بھے۔۔

مہر کو گھوما کر اس کی  ی شت  نکدم ا پ نے س ی نے سے لگا تی بھی ، مہر کیسا یس پں لمچے کے ل نے  بھ پں  بھ پں  حب اس      بے  ت یرپ ز کے  ہا بھوں کا لمس ا پت ی گردن  نہ م

حشوس ک یا بھا ۔۔

مہر کے  نالوں کو ا نک طرف ک نے اس کے گلے م پں ا نک  نہت کی ن فی س سا  پب کلی س  نہ یا نا  بھا  چو کہ ڈ نل  ج پن  نہ  پ یا نا گ یا  بھا ، لاکٹ کے  پیچ م پں ا نک  نہت  ہی  پ یاری  پ یلی پت ی ہو تی  بھی جس  پر م    

ہر ا ور ت یرپ ز دوب وں کا  نام لکھا  ہوا  بھا۔۔

لاکٹ اسکی گلے کی ز پپ ت  پ یا  بے کے ن عد ا پ نے د ہک نے ل بوں کا لمس اسکی      بے داغ گردن  نہ  حھوڑا  بھا  جس  نہ مہر ا پت ی آ نکھوں کو  پ ید کر گ     تی بھی ۔

ک یا آج  ہماری  پ یگم  ہم پں محپ ت م پں دل سے روح کا س

فر طے کربے کی ا چازت  قرا ہم کر تی  ہے؟

 مہر کا ر خ ا پت ی  چا پب موڑے  چذ نات سے  چور ل ہچے م پں  بولا

 چ یکہ ا پت ی  حھل مل کر تی  ساپ ن ہ  قگن کو مز ند  حھکا گت ی  بھی وہ  ت یر پز کیسا یشوں کو ا پ نے  چہرے کے  ق رپب محشوس کر کے، ا پت ی محپ ت ر صام یدی کا ا قرار زنان سے ک رنا م شکل لگ ر ہا  بھا   پٹھی ا پ یا سر مح پت سے

 اس کے  چوڑے س ی نے سے  نکا گ تی ،

ا پت ی  پ بوی کی اس  چون صورت ادا  پر ا نک  چان ل بوا مسکرا ہٹ  ت یر پز  چان

کے  چہرے  نہ در آ تی  بھی وہ محپ ت سے ا پت ی  پ یگم کو  نا نہوں م                                                                                                             

 پں ابھابے  پ یڈ  نک آ نا۔۔

                                                اک دن ا ب چا بے م پں مح پت کے سا بھ ملا قات  چو  ہو ت ی

 سرد  ہوا اور سا بھ م پں  ہلکی  ہلکی پ رسات  چو  ہو ت ی

 شچ  بو حھو  بو موسم  نہت ا حھا  بھا

                                                                                                                 نہ  نہک نے کا م

گر م یرا ارادہ  نکا بھا

                                                                                ادب سے مپں بے  چو بیش  

چدمت سلام ک ی ا

نہ محپ ت بے م جھ سے کلام ک ی ا

                                                                                  نہا پت مؤد نا

مہر کو ا پت ی مح پت ، ا پ نے  چذ نات کے سم یدر م پں لے ڈو نا  بھا وہ ، اس کی

محپ ت  بھری گس یا جی  پر وہ سر اس کے س ی نے م پں  ہی  حھ یا گت ی بھی ، جس  پر وہ دھ یرج سا  ہ یس د پ یا  بھا ، مہر کا  سرما نہ اور  بھر۔ سرما کر اسی م پں  پ یاہ  نلا سن ہ  ت یر پز  چان کو مز ند  جسار بوں  پر اکسا د پ یا۔۔

ا یسے  ہی دو محپ ت کر    بے والوں محرم کو اللہ          بے ملا نا  بھا ، آسمان م پںمو چود  چا ند ،  ف صا م پں ر فص کر تی  ہوا ب پں سب ان کے ملن  پر  چوش

ہوبے بھے۔

نے سب کی دغاب پں ہی نکلی بھپں، ان دومحپ ت کر    بے والوں کی داس یان ر قم  ہو تی  بھی۔ چو کہ محرم  بھے ا نک دوسرے کے ،

اس چو نلی کے مکی بوں کے ل                                    

رات کا کھا نا کھا بے کے ن عد وہ ا بھی ل ی ی نے  ہی لگا  بھا کہ کسی                                                           بے دروازہ

کھ یکھ یا نا ، وہ ا چا نک  ہڑپ ڑا کے ا بھا اور دروازہ کھولا  چہاں  چہرے کو  چادر

 سے کوور ک نے مومن ہ کھڑی بھی۔

 م یڈم آپ ؟ اس وفت۔۔

وہ کاف ی زنادہ حیران  ہوا  بھا مومن ہ کو اس و فت نہاں ا پ نے کوا پر م پں د نکھ کر۔۔

      ہاں وہ  ہم ا یسے  ہی  نہاں سے گزر ر ہے  ب                                  

ھے بو ی س سو چا کہ آپ بےذکر ک یا  بھا  نا کہ آپ کے  ناس کو تی ا یسان کلو پ یڈ نا کی ک یاب  ہے  بو وہ ل ی

نے  چاب پں؟

آپ رات کے اس  نہر  نہاں اک یلی آ تی  ہ پں ، کو تی د نکھ لے گا  بو ا حھا   نہ پں  ہو گا م یڈم آپ  یدہ ا ج ی یاب پ ر پ نے گا۔

                   ک یاب  ہا بھ م پں  بھما بے وہ کھ یاک سے دروازہ  پ ید کر گ یا  بھا ۔

وہ ک یاب کو سی نے سے لا     بے آرام سے اوپر چا ر ہی بھی کہ نانا کی کرک دار آواز سے اس کے  قدم و ہ پں م ی جمد  ہو بے  بھے۔

گل۔۔ تم اس و فت اک یلے  نا ہر ک یا کر ر ہی  بھ پں اور  نہ  تمہارے  ہا بھ م پں ک یا           ہے؟

 اس سا یس  بچال ک نے وہ  نلٹ کر ان   کو د نکھا  بھا۔۔

  نا نا  چان وہ ،  ہاں وہ  ہم  نا ہر   بیٹ ھے ک      یاب  ہڑھ ر   ہے بھے۔

                                مسکرا کر کہت ی اس  بے ا پ نے آپ کو  نارمل رکھ یا  چا ہا  بھا۔۔

 ہ ین  ہہ۔۔ چو  کجھ  بھی  ہڑھ یا لکھ یا  ہو نا  ہے ا پ نے کمرے م پں  پڑھا کرو ،  بوں  رات کو اک یلے دو نارا  نا ہر  نہ د نکھوں۔

ش خت روبے سے کہ نے وہ وا یس کمرے م پں چا چکے بھے چیکہ مومن ہ بھی بھا گ نے  ہو     بے کمرے م پں  پ ید  ہو تی  بھی ، ا نک گہرا سا یس ک یا  بھا اس

 بے ،

ا چا نک  ہی ا نک  چون صورت مشکان    بے اس کے  چہرے  پر ر ف    ص ک یا بھا  حب  ن ظر  ہا بھ م پں مو چود ک یاب  نہ گت ی ، اس ک یاب کو  ناک کے  ناس ک نے اس کی  چو س بو کو  چود م پں ا نارا    بھا۔

کمرے سے م یسلک  ت یرس م پں  ب یٹ ھ کر ک یاب کو  پڑھا  نہ پں  بھا اس                                                                                                         بے

ی س ص فچات  نل ی نے  قارس کو سوچ ر ہی  بھی  چو کہ اس کے  چ یالوں  نہ  حھار ہا  بھا ، اور اسے سو چ نے سو چ نے وہ کب  ب ی ید م پں گت ی اسے اجساس  نہ  ہوا۔

 قارس چو پڑی پ یگم کے کہ نے  پر  کجھ سامان لانا بھا ا نہپں د پ نے کی  غرض

سے چو نلی م پں  چا ر ہا  بھا کہ  بے سا حن ہ اس کی  ن ظر یں مومن ہ کی  ت یرس  نہ

ا بھی  بھ پں ،  چہاں وہ اس کی ک یاب کو س ی نے سے لگا بے سو ر ہی  بھی ،سورج کی  ت  یز رو ست ی اس کے  چہرے  نہ  پڑ ر ہی  بھی  جس کے  ناغث اس کی  چلد  حمک    

تی  ہوتی محشوس  ہو ر ہی بھی۔

اس کے مو  بجھوں  نلے غ یا تی لب مسکرا بے  بھے گلِ مومن ہ کو ا یسے د نکھ کر۔۔

  بھر سر  حھ یک نے ا ندر  چلا گ یا  بھا۔

مہر کی آ نکھ ص یح الارم کی آواز  پر کھلی  بھی ،  نہلو مپں ن ظر یں دوڑا بپں چہاں

 ت یر پز مو چود  نہ پں  بھا ، وا سروم کی  چا پب د نکھا اسکا دروازہ    بھی کھلا  ہوا

 بھا ،

   ،وہ ص یح ا بھ کر معمول کے مظاب ق زم ی بوں  پر  چا  حکا  بھا سکون کا

سا یس     چارج ک یا  بھا۔اس    بے۔۔ ور نہ  ت یر پز کے سا م نے اسکی ا بھ نے کی ہمت  نہ  ہو تی ، رات  بھر کت ی گت ی اس کی محپ ت  بھری  ج سا رب پں اسکو چود

 

م پں سم ی نے پ ر  مح بور کر گت ی  بھ پں، ا بھی  بھی وہ  چود م پں  ت یر پز  چان کی چو س بو کو محشوس کر ر ہی  بھی ،          بے  سک وہ دوب وں محرم  بھے  چدا بے ان

 

 کے  ناک ر س نے کو  نا        بے  نکم یل  نک  نہ  چا نا  بھا۔۔ یم قا نل کو  ہی سو چت ی وہ مسکرا کر وا سروم م پں  پ ید  ہو گ

تی بھی ،  بھر

 بھوڑی د پ ر م پں  پ یار  نکھری  نکھری سی  س ی سے کے سا م نے کھڑی  چود کےغکس کو د نکھ ر ہی  بھی ۔آج اس  پر  ت یرپ ز کی محپ ت کا روپ  حھا نا  ہوا بھا جس کے ناغث  چہرے  پر سے مشکان  چدا ہو       بے کا نام  نہپں لے ر ہی

 بھی۔

 س ی سے م پں سے  حب  ن ظر م قا نل کے د         بے گ نے  پ یڈ پٹ  نہ  پڑی ،  پ یار سے  حھوا  بھا اس کو ،  ت  یر پز کی محپ ت اور د بوا نگی کو سو چ نے ا ن     ک   نار  بھر

 سرم ی                                                   

لی مشکان اس کے  چہرے  نہ آتی بھی  چو کہ مہر کو مز ند دلکش  پ یا

 ر ہی بھی۔

  اسلام وغل یکم!

                       تی  چان کے  ناس  ب یٹ ھت ی اس  بے   سب کو سلام ک یا  بھا ،

     جس پر ا نہوں  بے سلام کا  چواب د بے محپ ت سے اس کی  ن ظر ا ناری

 بھی ،

وہ لگ  ہی  نہت  چون صورت ر ہی  بھی  ن ف ی یًا  نہ  ت یر پز کی        بے  چا مح پت اور

ک ب یر  بھی  جس  بے ا نک مہ ی نے سے  ب جھی مہر کو  نکھار د نا  بھا ، وہ مر حھی

 ہو تی مہر  چو  ت یر پز کے  چا         بے کے ن عد  ب جھ سی گت ی بھی اس کے لوٹ آ بے  پر  گلا تی کی ما پ ید کھل گ

تی بھی ۔

    ارے واو آ تی آپ  بو ک ی نے ل شکارے مار ر ہی  ہ پں؟  ح یر  بو         ہے۔۔

شحر  بے دل ف رپب مشکان  چہرے  پر ش چا بے ا پت ی  نہن کے  چہرے کو د نکھا   بھا  چہاں  پر محپ ت ،  چو سی ،  سرم ،  ج یسے    ناپرات مو چود بھے۔

 آللہ م یاں م یری آ تی کو  بوں  ہمی  شہ  چوش ر کھے۔

محپ ت سے کہت ی وہ مہر کے گلے لگ گت ی  بھی چیکہ مہر  بے  بھی  پ یار

  بھری  ن ظر ا پت ی  نہن  نہ ڈالی  بھی۔

     کالج سے  حھت ی کے ن عد مومن ہ  بے  قارس کو گاڑی مال کی  چا پب

              موڑ بے کا کہا  بھا ک بو نکہ اسے اسا تمپ ٹ کے ل نے  کجھ  ضروری سامان

 درکار بھا۔

 جس پ ر  قارس         بے  نہلے  ت یر پز سے  نصدب ق  چا ہی  بھی  جس  پ ر اس         بے  ہاں م پں  چواب د پ نے

ہوبے مال لے  چابے کی ا چازت دے دی ۔

                                     م یڈم  چلدی کر ل پں  ہم پں وا یس گاؤں  بھی  چا نا  ہے۔

وہ بورے انک گھ ی نے سے اسے مال لے کر گھوم ر ہی  بھی ل یکن ا بھی  نک اسکو ا پت ی مظلون ہ  ساپ  نہ پں ملی  بھی۔

 ہماری ک یا  غلطی     ہے اس م پں ، ا پ نے پ ڑے مال م پں ا نک ڈھ یک کی نک  ساپ  نہ پں        ہے، لو  بھلا  بورا مال  حھان مارا  ہے کو تی ا حھے کال یت ی کے  بی پ ٹ  نہ پں مل ر    ہے۔ وہ  بھی  حھ ی جھلا کر  بولی  بھی۔

ہ غصے سے س یکن ہ  ہوتی بھی

ا بھی وہ  بھوڑا آگے  ہی پ ڑے  بھے کہ مومن                     

  حب  کجھ لڑک بوں کے سرکل  قارس کی  چا پب د نکھ نے کمپ

ٹ ک نے بھے۔۔

                                                                                                          واؤ۔۔۔ک ی یا  ہی  یڈسم لڑکا  ہے۔۔۔

 تم لوگوں کو  سرم نہپں آ تی ب وں کسی لڑکے کی طرف آ نکھ ا بھا کر د نکھ نے اس  پر کمپ ٹ کر ر ہی  ہو ۔۔

وہ ان لڑک بوں کے سر  نہ  نہ  یحت ی   چیخ کر  بولی  بھی۔۔ چ یکہ ان لڑک بوںسم پت  قارس  بھی ح یرت کے سم یدر م پں  عوطہ زن  ہوا  بھا اس  حھو تی سی لڑکی کو  بوں لڑ     بے د نکھ ۔۔

 ا نکسک بوز می۔۔۔

                          ان م پں سے ا نک لڑکی ادا سے ا پ نے  ج سمہ کو ا

ناربے  بولی۔

                                                                                                                                                         آ بے ا نکسک بوزڈ  بو۔۔

                                                                                                                                        وہ  ب                

ھی دو ندو  ہوتی بھی۔

 چل پں قارس اب  ہم پں  نہاں سے کجھ  بھی  نہ پں ل ی یا ،  غصے سے کہت ی وہ  نا ہر  نارک یگ م پں مو چود گاڑی م پں  چا  ب یٹ

ھی بھی۔

 ا یسے ک یا د نکھ ر ہو  ہو؟

ظر یں چود  پر محشوس ک نے  بولی بھی وہ۔

                  ق رپٹ مرر سے  قارس کی  ن       

م پں  نہ د نکھ ر ہا  ہوں کہ کو تی ا پ نے ڈراپ  بور لے ل نے ا پ یا پ ز یس بو  بھی  ہو سک یا      ہے؟

     مسکرا ہٹ  حھ یا بے وہ ن  غور اس کا  چا پزہ لے ر ہا  بھا ، س ف ید  بو پب  قارم م پں

   

مل بوس  چود کو کالی  چادر سے ڈھکے ،  غصے م پں  ب یٹ ھی  ہوتی کوتی معصوم

 گڑ نا لگ ر ہی بھی ،

ی س  ہمپں احھا  نہپں لگا ان کا بوں آپ کی طرف د نکھ یا۔

قارس کو  نہت ک بوٹ لگی بھی۔

                             غصے سے من ہ  بھلا بے  بولت ی  

 قارس اسکو د نکھ یا رہ گ یا  بھا  چو کہ  تم سے آپ کا س      فر طے کر  چکی بھی ،

  قارس کے دل کی  بھی ا نک  پ پٹ مس  ہو تی بھی۔

 اور ک بوں ا حھا  نہ پں لگا ؟

                                                                    مسکرا ہٹ د نا بے وہ اسکی آ نکھوں کو د نکھ ر ہا  بھا

وہ  ہم پں  نہ پں معلوم  ن ظر یں  جرا   بے وہ  نا ہر د نکھ    نے لگی بھی ۔۔ چ یکہ اس کے  ن ظروں کے زاو بے کو  ندل یا وہ ن  غو تی  بوٹ کر حکا  بھا۔

 ارے آپ کب آبے؟

                           مہر کی آواز  پر  چان  بے  ن ظر یں ا بھا کر اسکی  چا پب د نکھا  بھا ۔۔

 ادھر آو مہر۔۔۔

  • و حھل آواز سے کہ یا مہر کو ا پ نے ناس آ       بے کا چکم د نا  بھا ،  ت یرپ ز کی  بھکی

     

اور  پر ی سان زدہ آواز سن کر اسے  بھی  ی شو یش لاچق  ہو تی بھی ،  حھوبے  قدم ا بھا     بے اس کے  ناس گت ی  بھی کہ م قا نل         بے  ہا بھ سے ک ھی یچ کر ا پ نے  نہلو م

 پں گرا نا بھا۔

 آ۔۔آپ  بھ یک  بو  ہ پں  نا؟

 اس کی لال آ نکھوں کو د نکھ کو پ ر ی سات ی سے  بولی  بھی۔

م پں مر گ یا  ہوں ک یا  چو آپ    بے  نہ کالا  رنگ  نہ یا       ہے  نہ  چا پ نے  ہو بے  بھی کہ م جھے  ن فرت            ہے اس ر نگ سے ،

مہر کی نات کو سرے اے اگ بور ک نے اس کی نالوں کو ا پت ی ا ہ  تی گرفت م پں ل ی نے  بولا کہ مہر کی سس  کی نکلی بھی۔۔

  تم  چا پت ی  ہو مہر  نہ  رنگ  نہت م یجوس         ہے م جھے  جڑ          ہے اس ر نگ سے ،

 تم م جھے کھل نے  ہو  بے  رنگوں م پں ا حھی لگت ی  ہو ، اگر  تمہ پں ا پ یا  سوق  ہے  نہ  رنگ  نہ یا کا  بو اس  سوق کو م یرے مر بے کے ن عد  بورا ک رنا۔۔

 اب کے اس  بے اس کے  نالوں کو  حھوڑ کر سر ا پ نے س ی نے  پر  نکا نا  بھا

  • یر پز۔۔۔

                                                        مہر  س سدر سی رہ گت ی  بھی اس کے رو بے پ ر۔۔

 چاو  سا ناش !   جی یج کرو اس ڈر یس کو م پں  بھی  حب  نک  قر یش  ہو  چا نا

  ہوں  بھر مل  جر کھا  نا کھاب پں گے۔۔

 پ یار سے کہ نے آ جر م پں محپ ت  بھری گس یا جی ک رنا مہر کی دھڑک بوں کو م ی جمد کر گ یا ۔۔

 قارس  ت یر پز کے سا بھ ڈ پرے  پر  ب یٹ ھا

ہوا بھا کہ اس کا دھ یان چود بجودمومن ہ کی  چا پب گ یا  بھا آج کت ی گت ی اس کی  نا بوں کو سو چ یا وہ  چود م پں  ہی مسکرا ر ہا  بھا کہ  ت یرپ ز کی آواز سن  ہوش م پں آ نا  بھا۔

                                                        ک یا  نات  ہے  قارس آج  چود م پں  ہی مسکرا ر ہے  ہو؟

                                                                                                                                               سب  ح یر  بو  ہے  نا۔۔

 کسی لڑکی و غ یرہ کا س پن  بو  نہ پں؟

گلا تی سلوار قمب ض پر بھوری چادر کا ندھوں پر ڈالے ناوں م پں  ی سا وری  چ یل  نہ نے  سوخ  ن ظروں سے د نکھ نے  بولا  بھا وہ۔۔

  نہ پں سر  ۔ا یسی کو تی  نات  نہ پں۔۔

ا نک دم وہ س یر یس  ہوا  بھا  م یادہ کہ پں وہ اس کے دل کی  نات  ہی  نہ  چان لے۔۔   ہہمم۔۔

                                                                      چان  بے  چو چت ی  ہو تی  ن ظروں سے د نکھا  بھا اسے۔

  بھر ا پ نے سان  قہ کام م پں مضروف  ہو گ یا۔

م غرب کے  نا تم وہ  چ یکے سے کوا پر م پں دا چل  ہو تی  ب    

ھی  ہابھ م پں و ہیک یاب  بھامے آس  ناس د نکھت ی ڈر ڈر کے  

قدم  بھر ر ہی بھی اور  ج یسے  ہی

قارس کے دروازے کو کھلا د نکھا لم یا سایس ہوا کے س یرد ک نے

       اس  بے  

                                                                                                                                                                     دروازا  

ب چا نا بھا۔

 قارس                                        بے  ج یسے  ہی دروازہ کھولا  بھا مومن ہ کو د نکھ ما بھے   پر  نلوں کا ا صا فہ  ہوا  بھا۔ آپ  نہاں ک یا کر ر ہی  ہ پں م یڈم؟

  • ہچے م پں نا گواری سمو       بے وہ مومن ہ کو گھور       بے  ہو     بے  بولا  بھا۔۔

آپ  ہم پں ا یسے ک بوں  بول ر                                           ہے  ہ پں ک یا  ہمارا  نہاں آ نا آپ کو  یس ید  نہ پں ؟

اس کی آ نکھوں م پں د نکھ نے اس  بے سوال ک یا  بھا م قا نل کے ل ہچے کی  ناگواری کو محشوس  ک نے۔

  • یڈم چو  بھی  ہو  آپ  چان چو نلی کی غزت  ہ پں اور  نہ ا حھا  نہ پں لگ یا کہ آپ  نار  نار  نہاں کوا پر م پں آ ب پں ،  نہ ملازم پن کا ا پر نا       ہے اسل نے آپ  یدہ دھیان رکھنے گا ور نہ کو تی  بھی آپ کے  نا میرے کردار کے  چلاف  نات  پ یا سک یا           ہے  چو کہ م جھے گوارا  نہ پں۔

 ہم پں ان سب  ح یزوں سے  ق رق  نہ پں پ ڑ نا  ہم ی س ا پ یا  چا پ نے  ہ پں کہآپ  ہم پں ا حھے لگ نے لگے  ہ پں۔آپ سے مل یا ،  نا ب پں ک رنا  نہت ا حھا کر  د پ یا       ہے  ہماری طب ع پت کو۔

تی بھی۔

    وہ مسکرا کر کہت ی سا م نے کھڑے  قارس کو دھ یگ کر گ

م یڈم آپ  چا پت ی  بھی  ہ پں کہ ک یا کہہ ر ہی  ہ پں؟ اگر ک        سی بے سن ل یا بو  ہم دوب وں کے چق  م پں ا حھا  نہ پں  ہو گا۔

تما ناں بھے۔

                                                                     ح یرت کے غ یاضر اسکے  چہرے  نہ  

کہا  نا  ہم پں  قرق  نہ پں  پڑ نا  ہم ضرف ا پ یا  چا پ نے  ہ پں آپ گل مومن ہ کی  یس ید  ہ پں۔

        ا پ نے ل ہچے م پں س  یح یدگی  پرو بے وہ  قارس غلوی کو  غصہ دلا گت ی ۔

ع شق  ہی  چو ہر  ہے ز ندگی کا  نہ ع شق  ہی  ہمارے  حملہ مسا نل کا چل اور

مداوا    ہے۔   ہمارا کو تی  چذن ہ ا پ یا م و پر  نہ پں  ج ی یا ع شق       ہے۔ ع شق کی  چاطرا یسان پ ڑی سے پ ڑی  قر نات ی سے  بھی در نغ  نہ پں ک رنا۔ ع شق  ہی  ہر          سےاور و چود کا سہارا اور ع شق  ہی ن طور ا نک اصول کاپ 

یات م پں کار قرما           ہے‘‘۔

 اور م جھے کسی  ح یز کی  پروا  نہ پں  قارس ۔

آپ مومن ہ کا ع شق  ہو ، ا پ نے ع شق کے ل نے مومن ہ ا پت ی  چان  نک  قر نان کر       بے کو  پ یار  ہے۔

 ہمارے گاوں  ہی کو تی رسم و رواج  ہم پں ا نک  ہو              بے سے  نہ پں روک سک یا ۔

اس م یزل م پں  ہم  نہت آگے پ ڑھ  چکے  ہ پں اب  ہماری وا یسی ممکن  نہ پں  ہے  قارس ۔

آپ                                                                    بے  سک  قرق  نہ  پڑ نا  ہو ل یکن م جھے  پڑ نا  ہے ک بو نکہ م پں ا پت ی م یگ ب یر کے سا بھ س یر یس  ہوں ۔۔

                                                                                                             ج۔۔ حھوٹ  بول ر ہے  ہ پں آپ؟

                   

 اس بے نصدب ق چا ہی بھی۔۔

                                                                   م جھے ک یا  ضرورت پ ڑی  ہے  حھوٹ کہ نے کی ؟

    م جھے اب  ب ی ید آ ر ہی                                ہے  نہ یر

ہو گا اب آپ  چاب پں  نہاں  سے    بوں کھڑے رہ کر ا پ یا اور م یرا و فت  صان ع  نہ کر یں۔

 اکھڑے ل ہچے م پں کہ یا وہ سا م نے کھڑی مومن

ہ کا دل  ر پزہ ر پزہ کر گ یا بھا۔

ا پ نے  نا ہر ا نل آ بے والے آ یشوں کا گلا گھو پ نے وہ  بھا گ نے  ہو        بے و ہاں

سے گت ی  بھی  چ یکہ  قارس            بے  بھی دروازے کو  پ ی ح نے کے ا نداذ م پں  پ ید

                                                                                                                                                                         ک یا     بھا۔

 م جھے معاف کر د پ یا مومن ہ م پں  مح بور  ہوں۔

من م پں پڑاپڑا نا وہ ل ی ی نے کو گ یا  بھا ہاں ال پن ہ نہ  نات الگ  بھی اسے  ب ی ید

                     

 نہ پں آتی بھی۔

کمرے م پں آ                                       بے  ہی اسکا کب سے  پ یدھا  ضب ط  بوا  بھا اور ا نک سا بھ ک ی نے  ہی آ یشوں      بے مول  ہو     بے  بھے ۔

                                                      آپ کو م یری مح پت ،  چا ہت  نادا تی لگت ی  ہے۔۔

قارس کو نصور ک نے  بولی بھی۔

                         ہ چک بوں کی صورت م پں رو تی وہ           

  نہ  نصور کا غالم

  نہ دلِ غا س قی

  نہ د بوا نہ موسم

  نہ م یری دل لگی

  ہم کو پ ڑا  ہی

                                                                                                                                                                  کرے  بے کرار

  ہمکو  پ یار  پ یار  پ یار  پ یار  پ یار  پ یار۔۔۔۔

اگلی ص یح  حب  قارس اسے کالج  حھوڑ بے  چا ر ہا  بھا  بو  قارس  بے ن  غور اس

کی چالت کا  چا پزہ ل یا  بھا  جس لڑکی کا  چہرہ کل  نک  بھول کی ما پ ید کِھلا  ہوا  بھا آج و ہی کو تی مر حھا نا  ہوا  بھول لگ ر ہی  بھی ، آ نکھ پں لال سرخ ہو تی  بھ پں چو کہ رات  بھر رو       بے کی  ح علی کھا ر ہی  بھ پں۔بورے را س نےوہ  چاموش ر ہی  بھی  نہ  کجھ کہا  بھا اس       بے اور  نہ  ہی ا نک  نار  ن ظروں کا

    

پ یادلہ ک یا بھا۔

مومن ہ کی اس چالت کو د نکھ اس کا دل ک یا  بھا ل یکن اس  بے  بھی

  کجھ  نہ کہ نے کی  قسم کھا رکھی  بھی ۔

 گل مورے   پی چے  نلا ر ہی  ہ پں۔۔

 کھا نا کھا لو۔۔

شحر  بے آ کر کم ف رپر م پں دنکی مومن ہ کو نکالا  بھا  چو کہ  بورے کمرے م پں

 ا ندھ یرا ک نے ل ی        تی بھی۔

  ہم پں  بھوک  ن

                                                                                                                                       ہ پں  ہے کہہ دو  چا کر۔۔

 ا س نے  بھی رو کھے ل ہچے م پں کہہ کر کروٹ  ندلی لی۔

      ک یا  ہو گ یا  ہے مومن ہ  بھوک  تمہ پں  نہ پں لگی ،  نا ہر  تم  بے  نہ پں آ نا

 

 کہ پں ع سے ع شق  بو  نہ پں کر  ب یٹھی۔؟

 چہرے سے  حھٹ سے کم یل  ہٹ ھا نا اور  پکرھ نے والی  ن ظروں سے د نکھا  بھا گل کو۔۔

                           ی۔۔ نہ ک یا  ف صول ب ول ر ہی  ہو ، ا یسا  کجھ  نہ پں          ہے۔۔

                      ن ظروں کا زاو نہ  پ ید نل ک نے وہ گڑپ ڑا        بے  ہو          بے  بولی  بھی۔

 ہا ہا ہا۔۔۔گل مپں  بو مزاق کر  ر ہی بھی تم۔ بو ا یسے ڈر ر ہی  ہو ج یسے شچ مچ

 ع شق کر  ب یٹ

ھی  ہو۔۔

اسکا مزاق اڑا                                                       بے وہ  ین  فن کمرے سے  نکلی  بھی م یادا کہ پں مومن ہ ا بھ کر غزت  

نہ کربے لگے۔۔

شحر کو گ نے ا بھی  نا بچ مپ ٹ  بھی  نہ  ہو   بے  بھے کہ ا پت ی  سہان ِ   سان  چل یا  ت یر پز  چان کمرے م پں دا چل  ہوا  بھا۔

                                               م یری گڑ نا کو ک یا  ہوا  ہے  چو کہ  نا ہر  ہی  نہ پں آ ر ہی ؟

 لالا۔۔۔

وہ ی س سر م پں درد  بھا ۔۔کم ف رپر ا نک طرف رکھت ی وہ  ت یر پز کے  ناس  ہی آ

                                                                                                                                                                       ب یٹ

ھی بھی۔

     

                                                                                                                                    گڑ نا کوتی  پر ی ساتی  ہے ؟

 اس کی آ نکھوں کو د نکھ نے کجھ  نلا س نے کی کو سش م پں  بھا۔۔

  نہ پں لالا کو تی  پر ی سات ی  نہ پں ۔۔

                                                                                                                               اس  بے  ن ف پن دلا نا  چا ہا  بھا۔

  نکا؟

                                                                                 بھ بو بے ا حکا بے اس  بے مومن ہ کو د نکھا۔۔

  جی ۔

                                                                          بھر وہ دوب وں   پی چے  ہال م پں  چل د بے۔۔

          لالا آپ  ہم پں  نہاں ک بوں لا  بے  ہ پں؟ گاڑی کو  قارم ہاوس م پں دا چل  ہو   بے د نکھ اس   بے سوالن ہ  ن ظروں سے  ت یر پز کی  چا پب د ن        کھا بھا۔

س سرسری سا کہا بھا۔۔

                                                                نکاح  ہے۔۔۔اس  بے ی

  نکاح!  پر  کس کا؟

بو جہ  ہوتی بھی۔

                                    اب وہ ب وری طرح سے  ت یر پز کی  چا پب م    

 م یری گڑ نا کا۔۔

اس کے  بھولے  بھولے گالوں کو کھ ی ی ح نے وہ محپ ت سے  بول کر  مومن ہ

 کا سکون  غارت کر گ یا۔۔

 ک یا؟ لالا  ہمارا  نکاح۔۔۔ ن ف رپ یا   چیج ی بھی وہ۔۔

  ہم پں کو تی  نکاح  نہ پں ک رنا لالا۔۔

 ت یر پز کے  ہا بھ کو م ص بوطی سے  ب ھامے وہ  ن فرپ یًا رو   بے والی  ہو گ         تی بھی   حب کہ اس کے  چہرے  پر مسکرا ہٹ آ تی  بھی ا پت ی گڑ نا کی جرکت پ ر۔۔

گل “آپ کے لالا     بے  نہ  فب صلہ  نہت سوچ سم جھ کر ل یا  ہے ،اسل نے آپ بے ا حھے   بجوں کی طرح  نکاح کا اح یرام ک رنا     ہے ، م پں ام ید ک رنا  ہوں

                                                                                                                       آپ ا پ

نے لالا کی  نات مابو گی۔

  جی لالا۔۔

                             سر  حھکا بے   پی چلے ل بوں کو ک چلے ،وہ آ یشوں کو   ب ی نے ب ولی  بھی ۔۔

۔م یری گڑ نا کو  چدا  ہمی  شہ  چوش ر کھے۔ ہر آ فت و  پر ی سات ی  تمہارے اوپ ر سے

                                                                                                                                                                       ن

ل  چابے۔۔

اس کے سر  نہ  ہا بھ ر کھے ا پت ی  نہن کو دغا دے گ یا  بھا اس  نات سے بے  ح یر کہ ک یا  نہ دغا ب پں  ف بول  ہو  نا ب پں گی ؟ ک یا  چوش رہ  نا       بے گی مومن ہ ا پت ی ز ندگی م پں۔۔۔

 بھوڑی د پر م پں  حب  نکاح طے  نا  حکا ، کت ی آ یشوں مومن ہ کی آ نکھوں سے

         نہہ کر  بے مول  ہو بے  بھے اس  سٹ مگر کی  ناد م پں  چو کہ کسی اور کی

 محپ ت کا دعویٰ دار بھا۔۔

 ہلکے گلا تی  رنگ کی  سلوار قمب ض م پں  ن قاست سے سر  نہ ڈو پن ہ اوڑھے سا بوں کے گرد کالی  چادر ل ی ی نے وہ  پ یڈ  نہ سر  حھکا  بے  ب یٹ ھی  نا چ بوں سےکھ یل ر ہی  بھی کہ کو تی دروازہ کھول کر روم مپں دا چل  ہوا ، اس        بےآ بے والی  ہست ی کو د نکھ یا گوارا  نہ ک یا  بھا ک بو نکہ اس و فت اسکا ذ ہن دو ہری سو چوں کا  سکار

ہو ر ہا بھا۔۔

تی بھی وہ ، مگر  کجھ د پر  نہلے  ہی وہ

دل  چذ نات کسی اور کے  نام ک رنا  چا ہ

سب ا ج ی یار کسی ا ب چان  ش خص کو دے گت ی  بھی  جسے وہ  چا پت ی  بھی  نہ

 بھی۔۔

 مومی۔۔

 س یاسا سی آواز  پر دھڑک بوں کو سٹ ھ یالے اس  بے  ن ظر یں ا بھا ب پں  بو  نکدم

 کھڑی  ہو تی  بھی ا پ نے سا م نے   قارس غلوی کو  نا کر۔۔

ہ پں  چاب پں  نہاں سے؟

                                     آ۔۔آپ ۔۔ی۔ نہاں ک یا کر ر ہے  

 ن ظروں کا رخ  بھ یرے وہ  غصے سے ب ولی  بھی چ یکہ کہ نے         

ہوبے ز نان

 لڑکھڑا تی بھی۔۔

نے آ نا بھا۔۔

                                                           وہ م پں آپ کو  نکاح کی م یارک  ناد د پ

  قارس کی  نات  پر  سکوہ ک یاں  ن ظروں سے د نکھا  بھا اسے  چو کہ مدھم سا مسکرا بے   قدم اس کی  چا پب پ ڑھا ر ہا  بھا۔

 مومن ہ  قارس غلوی  نکاح  نہت  نہت م یارک  ہو۔

اس کے ما بھے  نہ محپ ت کی  نہلی مہر  پپ ت ک نے مشرور سا مسکرا نا  بھا چ یکہ اس کی  نات اور محپ ت  بھرے لمس دوب وں       بے  ہی اس کی

                                                                                                                       دھڑک ی پں م ی 

یشر کی بھ پں۔

پب حیرت سے د نکھ ر ہی بھی ۔

                                        وہ ساکت  ہو تی اس کی  چا

 ک یا  ہ وا۔۔  ن ف پن  نہ پں آ ر ہا ؟

 اس کی آ نکھوں م پں سوالات کا  بھو ب چال د نکھ گو نا  ہوا۔۔

تماز  پڑھ کر ابھا بو سر م یرے کواپر م پں آبے بھے۔۔

    پرسوں م پں  حب                                                        

  قارس۔۔ قارس ۔ ۔

 ت یر پز  چان  چلا نا  ہوا ا ندر دا چل  ہوا  بھا کہ ا نک س یک یڈ کے ل نے  قارس  بھی ڈر گ یا  بھا  ب چا        بے ک یا  ہو گ یا ۔ ۔

  تمہاری  ہم ت ک یسے  ہو تی م یری  نہن کی آ ن

کھوں م پں آیشوں لابے کی۔۔

  قارس کے گر پ یان کو  ہا بھوں کی گر فت م پں ل نے دھاڑا  بھا۔۔

                                                                                                              م۔۔م پں بے کیا ک یا  ہے سر؟

 وہ گڑ پ ڑا نا بھا۔۔

                                        ا پت ی پ ڑی  نات  حھ یا                               بے  ہو          بے اور  بو حھ نے  ہو ک یا  ہوا؟

                                                              گھوری سے ب واز بے وہ ا نک مکا  بھی  جڑ  حکا  بھا۔۔

 دل م پں محپ ت ل نے   بیٹ ھے  ہو ، اور ا ظہار کر      بے  ہو     بے  سرما ر       ہے  ہو!! اور  نہاں لگا  بھا  قارس غلوی کو ح یرت کا  حھ بکا۔۔۔

                                                                                                              ک یا۔۔ا یسے ک یا گھور ر ہے  ہو۔ ۔

 ت یر پز  چان  ہوں ،  چ یل سی آ نکھ پں رکھ یا  ہوں ، ا پت ی  نہن کی آ نکھوں م پں  تمہارے ل نے  پڑپ د نکھی           ہے۔۔

                                 پر سر م پں  بے ا پ نے  چذ نات کو  حھ یا بے کی کو س ش کی ۔۔

 ک بو نکہ آپ کی  نہن کے  قا نل  نہ پں  ہوں م پں۔۔

وہ  جن آسا ی شوں کی غادی         ہے  ، م پں  چا کر  بھی ا نہ پں  بورا  نہ پں کر  سک یا۔

محپ ت کا  نام  قر نات ی       ہے سر ، آج م پں  نہ  قر نات ی دے دوں  بو مومن ہ م یڈم  چوش ر ہ پں گی ا پت ی ز ندگی م پں ، ور نہ م یرے سا بھ وہ گھٹ گھٹ کر   نہ پں  جی  نا ب پں گی ۔

  قارس۔ ۔

محپ ت  نہت  چون صورت  چذن ہ  ہے ،  شجی محپ ت ضرف مح بوب ما نگت ی     ہے ،

 آسا ی س پں  نا دولت  نہ پں ۔

 تم م یری  نہن کے ل نے ا نک  نہ یر ین ا پ ی چاب  ہو ، کم از کم ان رسم و رواجسے  بو کوسو دور  ہو۔۔کل  تم  قارم  ہاوس  نہ یچ  چا نا و ہاں م پں  چود تم دوبوں

     

کا  نکاح کرواں گا۔۔ تم م یری  نہن کی م حپ ت  ہو ، اسکی  یس ید  ہو ، اسے  ہمی  شہ  چوش رکھ یا۔

 م پں  ہر  قدم  پر  تم دوب وں کے سا بھ  ہوں۔۔

 نہ  نات  ہمی  شہ  ناد رکھ یا ،” ت یر پز  چان کو ا پت ی گڑ نا کی  چو س یاں  نہت غز پز  ہ پں”. اور دوسری  ح یز آج م پں ،  تمہارا  بھی لالا  ہوں ،۔۔

                                                                                      مسکرا کر کہ نے وہ اسے گ

لے لگا گ یا بھا۔۔

  م۔۔۔مظلب  بھاتی ی۔۔ نہ سب؟؟

وہ  نکدم  سوک  ہو گت ی  بھی۔۔آ نکھوں م پں سے آ یشوں اب  بھی  نہہ ر     ہے  بھے ، ی س  قرق ا پ یا  بھا وہ آ یشوں  چو سی کے  بھے۔۔

  قارس!  کجھ  ناد آ     بے  پر اسکی  چا پب د نکھا  بھا،

  جی  چانِ  چاں۔۔

 آ۔۔آپ کی م یگ ب یر؟

                                                                                                                وہ  حھ جھک نے  ہو بے  بولی بھی۔۔

  ہا ہا ہا۔۔۔۔م یری م یگ ب یر م یڈم س یر یسلی۔۔

 ا نک زوردار  قہ قہہ گو ب چا  بھا اسکا۔۔

وہ سب  ف صول  بھا،  نا کہ آپ م یرے  نارے م پں سوچ کر  چود کو  نکلب ف  نہ د یں ،مگر د نکھ پں  قسمت       بے ملا  ہی د نا۔۔

                                                         محپ ت سے اسے  نازوں کے گھ یرے م

 پں ل یا بھا ،

 مظلب آپ کی کو تی م یگ ب یر  نہ پں۔۔

                                                                                                اس  بے  چو سی سے  چہک نے  ہو بے کہا۔۔

     نہ پں۔۔ ن قی م پں سر  ہلا بے وہ محپ ت سے اس کے  ق       

رپب آ نا بھا اور محپ ت سے  بھر بور لمس  حھوڑ نا ، اس کی  سرما بے  پر  مح

 بور کر گ یا بھا۔

ہواب پں  چل ر ہی بھی موسم  عح پب سا اپ ر آلود

    حمغرات کا دن  بھا  بورے گاؤں م پں  ت یز                        

ہور ہا بھا،

 ت یر پز  چان کسی کام کے  بخت  سہر گ نے  ہو بے  بھ ے  چیکہ مومن ہ لان م پں

اک یلی  ب یٹ ھی  حھولا  حھول ر ہی  بھی کہ اس کی  ن ظر کوا پر ا پر نا کی  چا پب ا بھی  بھ پں دل م پں  سدت سے  چوا ہش ا بھی  بھی  قارس سے مل نے کی ،

                                     پٹ ھی مسکرا بے  ہو بے  قدم   پی جھے کی  چا پب پ ڑھا      بے  بھے۔۔

 حھ یکے سے اس کے روم م پں دا چل  ہو تی اور  ک یچن م پں کام کر بے  قارس کی آ نکھوں  پر  ہا بھ رکھ گت ی۔۔

 مومن ہ۔۔

اس کے  ہا بھوں پ ر  ہا بھ ر کھے گول گھما نا  بھا کہ س یدھا وہ د بوار سے  ین

         

  ہوتی بھی۔۔

 ک یا  ہوا ؟ آج کون سی ک یاب ل ی نے آ تی  ہ پں۔۔

                             کان کے  ناس حھک نے مدھم سے آواز م        

پں سرگوسی کی بھی۔۔

و۔۔وہ۔۔ہ۔۔ ہم آپ کو د نکھ نے آ       بے  بھے ،اس کے  چون صورت و چہہ  چہرے  کو د نکھ محپ ت سے ب ولی  بھی  چ یکہ وہ مشرور سا مسکرا نا  بھا۔

                                                                   ک یا آج آپ  ہم پں  چا بے کا  نہ پں کہ پں گے؟

             اس  بے معصوم پت سے آ نکھ پں  پ ی ی                                 

یابے کہا بھا۔۔ چ یکہ آنکھوں م پں

سرارت واضح بھی۔

                                                                                                                                     صاف  

وہ زرہ سا  حھکا  بھا اس کی  چا پب کہ سا یس پں مومن ہ کے  چہرے  پر  پڑ

 ر ہی بھی۔۔

 اب آپ  نکاح م پں  ہ پں م یرے، غزت  ہ پں  قارس کی ،

 اب کسی م پں دم  نہ پں کہ  ہم دوب وں کے کردار  پر  نات کر سکے۔

ک بو نکہ  ہم محرم  ین  چکے  ہ پں۔اب  ہماری محپ ت ، د بوا نگی ، ع شق ، مل یا  سب  چا پز         ہے۔

وہ  حمار آلود ل ہچے م پں   بو ل نے اسے د نکھ ر ہا  بھا  قارس غلوی کے لب اس

کے گلا تی  چہرے کو مس کر ر ہے بھے اس کی مشرور گرم سایس پں مومن ہ کو ا پ یا  چہرہ  حھلسا تی محشوس  ہو تی  بھ پں۔

م یری  زندگی م پں  سامل کو اسکو جس پن  پ یا        بے کا  سکر نہ مومی۔ اس کے ما بھے  پر لب رکھ نے وہ مدھم سا مسکرا نا  بھا ۔۔

 قارس غلوی آج  بورے دل و  چان سے  نہ اکرار ک رنا     ہے ،” م جھے گل مومن ہ  قارس سے  ع سے ع شق    ہے ۔

اس کے  چہرے پ ر  حھک نے وہ  پ یار  بھری گس یا جی کر گیا  بھا کہ مومن ہ کا چہرہ    سرم سے سرخ ا ناری  ہوا  بھا۔۔ وہ ا یسان  چو اس سے کل  نککسی اور کی محپ ت    کا دکھاوا ک رنا  بھا در ح فب  قت  بو وہ اسے  چا ہ یا  بھا اسکے دور  چا      بے سے  چوف کھا نا  بھا وہ  بو اس سے ا پن ہاہ کی محپ ت ک رنا  نہ  نات مومن ہ  قارس کو راحت  ب حش گ

تی بھی ۔

                                                  ہم   بھی آپ سے  بے  چا ع شق کر بے  ہ پں  قارس ۔۔

                        ہمارا وغدہ  ہے اس ر س نے کو  ہم آ جری سا یس  نک  پٹ ھا ب پں گے۔۔

اس       بے  بے ا ج ی یار لب  اس کے ما بھے  پر  ر کھے  بھے کہ  قارسمسکرا نا  اسے  محشوس ک رنا    چود م پں  ب ھی یچ گ یا  بھا  چو ا پ نے ر س نے کو اور م ص بوط کر   گت ی  بھی ۔وہ دوب وں ا نک دوسرے کی محپ ت م پں گم  بھے کہ  چو ہدری رم یز کی گرج دار آواز سے ساکت

ہوبے بھے۔۔

 گل مومن ہ۔۔۔

وہ سا یس پں روکے   پی جھے کو  نلت ی  بھی  چہاں  نا نا کھڑے  چون  چوار  ن ظروں  سے ا نہی کی  چا پب پ ڑ     بے  قارس غلوی کا گر پ یان  بھام گ

نے بھے۔۔

  تمہاری  ہمت ک یسے   ہو تی  ہماری غزت کی  چا پب آ نکھ ا بھا کر د نکھ نے کی۔۔

 قارس  پر  بھ یڑوں اور لا بوں کی پ رسات ک نے وہ  غصے سے پ  رہم  ہو  بے  بولے۔۔

م۔۔مومن ہ  ا۔۔اگر آپ    کی ع۔۔غزت    ہے  بو وہ م۔۔م یری  بھی غز۔۔۔غزت        ہے ، ن۔۔ن۔ ۔نکاح م پں       بے وہ م یرے۔۔

        چ۔۔ چہرے  پر سے چون کو صاف کر بے ا نک کر بولا  بھا  کہ ا نک اور

                                                                                                             مکہ  جڑا  بھا اسے رم یز  

چان بے۔۔

ب۔۔۔ نا۔۔۔ نا نا۔۔۔ نہ ض حیح کہہ ر                                  ہے  ہ پں۔۔  ہم  نکاح م پں  ہ پں ان کے۔

         سر  حھکا بے وہ دھ ٹمے ل ہچے م پں  ج یسے  ہی  بولی  بھی “ان کا  ہا بھ ا بھ گ یا

 بھا اس  پر۔۔۔

نہ ک یا تم بے،”ک یسے کسی  غ یر سے  

 بے  غ یرت لڑکی۔۔۔ ناپ کی غزت کا  بھی  چ یال  

نکاح ک یا تم بے ؟؟

اسکے  نالوں کو  ہا بھوں کی گر فت م پں ل ی نے وہ کھ ی ی ح نے وہ چو ن لی کے  نا غی چے م پں لا بے  ب

ھے دوبوں کو۔۔

 حب کہ  سور کی آواز سے مورے ،  تی  جی شحر اور مہر سب و ہاں آ تی  بھ پں اور سب   کا ک لی جہ چلق م پں آ نا  بھا اس م ب ظر کو د نکھ کر۔۔۔

اس ڈراپ  بور سے  نکاح ک یا    ہے  نہ  تم    بے آج  نہ  تمہارے سا م نے مرے گا  پڑ   بے گا ، ضرف  تمہاری  بھول کی و جہ سے۔۔۔

کہ نے ا نہوں  بے ا پ نے آدم بوں کو چکم د نا  بھا  چو کہ  نہلے سے ز حمی  قارس پ ر کوڑے کی پ رسات کر بے لگے  بھے وہ چو نلی اس و فت کو تی وج شت  ناکچون لی لگ ر ہی  بھی  چہاں پ ر وہ درد سہ یا   چیخ ر ہا  بھا  چ یکہ مومن ہ اس  کی

                   

 چالت  پر چون کے آیشوں  نہا ر ہی بھی۔۔

 ب۔۔ نا نا چ۔۔ حھوڑ د یں ا نہ پں۔۔

 مت۔۔مت مار یں روک۔۔روک پں ا نہ پں۔

ہپں نکل ر ہی بھی۔۔

                                            آ یشوں کے ناغث آواز چلق سے ن     

اس سے  نہلے کہ کل کو کو تی ا بھ کر  مجھ سے سوال کرے م پں اس و جہ کو  ہی  چٹ م کر د پ یا  ہوں۔

یدوق کا ی سا نہ  نہلے سے زحمی قارس کی  چا پب ل یا  بھا۔۔ چو کہ کاف ی د پر کے  ی سدد کی و جہ سے  نڈھال سا  پڑ گ یا  بھا۔۔ چہرہ  بورا  چون آلود  ہو ر ہا  بھا ۔۔

            چو ہدری رم یز  چان   بے  ہا بھ م پں مو چ ود  پ                         

     اس کی  نہ چالت مومن ہ کا دل  حھل

تی کر ر ہی بھی ک بو نکہ آج وہ  جس چالت م پں  بھا ضرف اسکی و جہ سے۔۔ ن۔۔۔ نہ پں ۔۔ نہپں  نانا نل یز اس م پں  قارس کی کو تی ۔۔غ۔۔ غلطی  ن۔ نہ پں،

م۔۔مت مار یں ا نہ پں۔۔۔ چدا کا واسطہ آپ کو ،  ب حش د یں  قارس کو ، م یری  چان لے ل پں مگر ا نہ پں  ب حش د یں۔۔

گل مومن ہ     بے ا پ نے  نا نا کے  ناوں  نکڑ         بے                                ہوبے کہا بھا  حب کے آیشوںان کے  پ نے پ را نڈڈ  سوز  پر گر ر         ہے  بھے ، وہ ا پت ی  سان کے  غرور م پں ا پت ی  ہی  ب یت ی کے آ یشوں  ن ظر ا نداز کر ر ہے  بھے۔

 چ یکہ  نالکو تی م پں کھڑی مہر  پر ی سا تی م پں  ت یر پز کو کال ملا        بے م پں مضروف

                      

 بھی  چو ب چابے کہاں رہ گ یا بھا۔

                تم دوب وں بے ہماری غزت ،  ہماری  نگ کو  پیچے گرا نا چاہا  بھا۔۔

                                                             ہم  بے گ یاہ   کر د نا  ب جھ  جی سی  ب یت ی کو  پ یدا کر کے،

 نا نا گ یاہ آپ سے  نہ پں،  ہم سے  ہوا  ہے  چو اس  حھو        بے ط ب

قے م پں  پ یدا  ہو       بے۔۔ چہاں عورت کو کو تی م قام  ہی  نہ پں د نا  چا نا۔۔

 اس کی آواز م پں ک یا  کجھ  نہ پں  بھا درد ،  نکلب ف ، ا قشوس ۔۔۔

                    حب کے اس کی  نات  بے رم یز  چان کو مز ند  سیخ  ناہ کر د نا  بھا۔۔

ان کا  ہا بھ ا  بھا  بھا  چو کہ مومن ہ کے گال  پر  ی سان  حھوڑ گ یا  بھا وہ او ندھے من ہ گری  بھی زم پن  پر ،  حب  ن ظر یں ا بھا ب پں  بو وہ  قارس غلوی کے  ناس گری  بھی  چہاں وہ  بھی اد کھلی آ نکھوں سے اسے د ن کھ  نکاربےکی کو سش کر ر ہا  بھا ل یکن  ہو پٹ ز حمی  ہو       بے کے  ناغث  نکا رنا م شکل

 ہو ر ہا بھا ، آ یشوں نلکوں  کی ناڑ یں بوڑ کر  نہہ ر           ہے بھے دو بوں د بوا بوں کی آ نکھوں سے ۔۔

              آ بے لو۔۔۔لو  بو  قارس ، گل مومن ہ آپ سے آ۔۔۔آ جری چد کا ع شق

                                                                                                                                                                        کرتی  ہے۔۔۔

 قارس کے  ہا بھوں کو  بھامے  نہ آ جری  حملا  بھا  چو مومن ہ  بے  نا م شکل کہا

 بھا

ک بو نکہ  ف صا م پن رم یز  

چان کی  پ یدوق کی آواز گو بجی بھی  چو کہ س ی دھا اس

کے دل کے م قام م پں لگی  بھی۔  نہ نے آ یشوں کے سا بھ مسکرا ہٹ اس

 کے  چہرے پ ر  حھا تی  ہو تی بھی ۔۔

اور اسکی روح پرواز کر  چکی بھی اس  ف ید  چا   بے سے ، اس ن قسِ  نازککے و چود کے سا بھ کسی اور و چود کی سا  یس پں  بھی ساکت  ہو تی  بھی اور  بھ پں  قارس غلوی کی۔۔۔

                                                دو دب وا بے  غرور ِ ع شق م پں  حھوڑ گ نے  بھے د پ یا کو ۔۔۔

 

          مومن ہ  بے ض حیح کہا  بھا کو تی رسم ان کو روک  نہ پں سکت ی ا نک  ہوبے

 سے،

وہ مل  چکے  بھے اس دوسرے  چہان م پں ،  چہاں کو تی دوسرا ان کی

مح پت م پں د بوار  ب ی نے والا  نہ  ہو گا ، ان کے ع شق کی داس یان ر قم کی  چا

  چکی بھی۔

 ت یر پز چو ا بھی چو نلی م پں دا چل  ہوا بھا ا ندر کا م ب ظر د نکھ قدم ڈگمگا                                                                                                      بے بھے

 اس کے وہ  بھاگ یا  ہوا مومن ہ اور  قارس کی لاش کے  ناس آ نا ۔۔۔

  نہ ک یا کر د نا  نا نا آپ بے؟

مومن ہ کی لاش کو س ی نے سے لگا                بے   چی ح نے  ہو          بے سا م نے کھڑے  چو ہدری

 رم یز سے سوال ک یا بھا۔۔

م یری گڑ نا۔۔۔ سدت سے س ی نے م پں  ب ھی چے اس  بے گل کو  نکارا  بھا  چو کہاس  قا تی         بے درد د پ یا سے کوچ کر گت ی  بھی ، ک ی یا سکون  ن ظر آ ر ہا  بھا اس کے  چہرے  پر ۔۔

ی یار کس بے د نا کہ کسی کی  چان ل پں؟

                                            آپ کو ا پ یا ا ج

       نکاح ہی ک یا بھا اس  بے کو تی گ یاہ  نہ پں۔۔  چو کہ غیرت کے  نام  پر

 ف یل کر ڈالا معصوموں کا ، ا بھی  بو ان          بے  جی  یا  بھا مر          بے کی عمر  بو  نہ

 بھی ان کی ۔۔۔

                                                                    بے موت مار ڈالا آپ  بے ا نہ پں  بے موت۔۔۔۔

آپ       بے اسل نے  چان لی  نا اس کی کہ  ب چاری  بے  یس ید سے  سادی کی  بھی  بو سن ل پں وہ لڑکا م یری  بھی  یس ید  بھا ،  نکاح کا گواہ م پں  چود  بھا۔۔

 ک یا اب م یری  بھی  چان ل پں گے آپ؟

                                                                                            ط یز نہ ل ہچے م پں کہ یا وہ  ہ

یس د نا بھا ۔

ارے  نانا کہاں اب  نک  پرات ی روا پ بوں م پں  جی رہے  ہپں کہ  چا ندان م پں  سادی  ہو گی ، گاؤں م پں  سادی

ہو گی وغ یرہ وغ یرہ۔۔۔۔

 چا پ نے  ہ پں  یس ید کی  سادی کا ا ج ی یار  ہمارا مذ ہب  چود د پ یا     ہے ۔۔و ہاں

کہ پں  نہ پں لکھا کہ  ساد ناں ضرف ا نک  ہی غلا فے کے لوگوں  نا  چا ندانکے لوگوں سے ر چاؤ۔۔اس  ح یز کا ا ج ی یار ا یسان کے  ہا بھ م پں  ہے کہ وہ کس سے ک رنا  چا ہ یا  ہے۔۔

 قرآن م پں  نہ  ضرور لکھا         ہے کہ  ہم  چا ندان م پں  سادی کر سک نے  ہ پں،ل یکن  نہ ضرف ر س بوں کا  پ یا   بے کے ل نے کہ کن ر س بوں سے  سادی ر چا نہ  چا پز        ہے!

 آپ  قرق کر رہے  ہ پں لوگوں م پں ،  چا نداب وں مپں ،  رنگ و یسل م پں ۔۔۔

  چ یکہ  نہ سب  ہمارے مذ ہب م پں مم بوع  ہے ،  ہمارا مذ ہب کہ یا        ہے:

،”کسی غر تی کو کسی  عجمی  پر ، کسی کالے کو کسی گورے پ ر کو تی

                                                                                                  ف ض یلت  نہ پں سوا بے  ن قویٰ کے”

  بو آپ ک یسے کر سک نے     ہ پں قرق؟

اسکا مظلب  بو  نہی  ہوا  نا کہ آپ مذ ہب سے  نہت دور  ہ پں ،  نہت دور۔۔۔۔

 ا پ یا  بھی  غرور ا حھا  نہ پں  ہ ونا  نا نا  نہ ا نک  نہ ا نک دن  پ یاہ کر د پ یا                                                                                                        ہے۔۔

 چان لے ل ی یا                                                                     ہے ا یسان کی  پن ہاہ رہ  چا نا  ہے ا یسان ضرف اسی گھم یڈ کی و جہ سے۔۔۔

اب  ہم نہاں انک لمجہ  بھی  نہ پں ر ہ پں گے  چا رہے  ہپں نہاں کی یشت سو چوں ، رسموں کو د فن ک نے آپ کو ا پ یا  غرور ،  نگ م یارک  ہو۔۔

     ت یر  پز  بے ا نک  ن ظر  نلر کے   پی جھے کھڑی ا پت ی ماں کو د نکھا  بھا  چو کہ ا پت ی

  • یتی کی موت ہر  چاموش آ یشوں  نہا ر ہی  بھ پں ک بو نکہ  سو ہر کے سا م نے

                                                               ز نان  چلا بے کی  غلطی وہ کر  نہ پں سکت ی بھ پں۔۔

  • یر پز لوگ ہمی  شہ کے ل نے وہ چو نلی کو  ح یر  ناد کہے  چا  چ کے بھے۔۔

 چو ہدری رم یز  چان و ہاں  پن ہاہ  رہ گ یا  بھا  بے  سک ان کے  ناس  نہت سے

 ملازم پن بھے

ل یکن وہ  پن ہا تی کا  سکار  ہو چکے  بھے ، ان کو۔ع شق  بھا ا پ نے  غرور ، ا پت ی  نگ  پر اور  نہی ع شق ان کو  پن ہاہ کر گ یا  بھا۔۔

اب وہ  چان چون لی  نہلے کی طرح  سان و  ساکت کی سرا نا  نہ  بھی  نلکہ کو تیوپ ران کھ یڈر  ین  چکی  بھی  جس م پں  غرور کے  ی سے م پں  چور  چو ہدری رم یزر ہ یا  بھا اور آج  بھی اس کے کاب وں م پں  قارس اور گل مومن ہ کی کھلکھلا ہ ی پں گو  بح

تی محشوس  ہوتی بھ پں۔

 کرو کج  چ ی پں  نہ سرِ ک فن ، مرے  قا نلوں کو گماں  نہ  ہو

                                            کہ  غرورِ ع شق کا  نا نک پن ،  یسِ مرگ  ہم  بے  بھلا د نا

 

 اُ دھر ا نک جرف کے ک س یت ی ،  نہاں لاکھ غذر  بھا گفیتی

  چو کہا  بو  ہ یس کے اُڑا د نا ،  چو لکھا بو پڑھ کے م یا د نا

  چو رکے  بو کوہِ گراں  بھے  ہم،  چو  چلے  بو  چاں سے گزر گ نے

                                                                                            رہِ  نار  ہم  بے  قدم  قدم  ب جھے  ناد گار  پ یا د نا

 

                                                                                                                                                          فب ض احمد فب  ض

 

چٹ م  سد۔۔۔۔۔

DOWNLOAD COMPLETE FROM THIS LINK👇

 

Urdu Novels, Gharoor-e-Ishq Ka Hankpan

 

Read Novels at this website Novelsnagri.com for more Online Urdu Novels and afsanay that are based on different kind of content and stories visit this website and give your reviews. you can also visit our facebook page for more content Novelsnagri ebook

For more novel visit to my channel toohttps://youtube.com/channel/UCKFUa8ZxydlO_-fwhd_UIoA

 

Leave a Comment

Your email address will not be published.